پاکستان میں اندراگاندھی طرز کی ایمرجنسی کی افواہیں

پاکستان مسلم لیگ۔ نواز (پی ایم ایل۔ این) اور پاکستان پیپلز پارٹی(پی پی پی) کو شبہ ہے کہ ایسی مہم کے پس پردہ حکمراں پاکستان تحریک انصاف ہے تاکہ حقیقی مسائل اور ہر محاذ پر اپنی ناکامی سے عوام کی توجہ ہٹائی جاسکے۔

نئی دہلی: پاکستان کی اہم اپوزیشن جماعتیں ملک میں کسی قسم کی ایمرجنسی جیسے 1975 میں اس وقت کی وزیراعظم اندراگاندھی نے ہندوستان میں نافذ کی تھی‘ کے نفاذ کی افواہوں کو منظم اور منصوبہ بند مہم تصور کرتی ہیں۔ اخبار ڈان نے یہ اطلاع دی۔

پاکستان مسلم لیگ۔ نواز (پی ایم ایل۔ این) اور پاکستان پیپلز پارٹی(پی پی پی) کو شبہ ہے کہ ایسی مہم کے پس پردہ حکمراں پاکستان تحریک انصاف ہے تاکہ حقیقی مسائل اور ہر محاذ پر اپنی ناکامی سے عوام کی توجہ ہٹائی جاسکے۔

بہرحال وزیر اطلاعات و نشریات فواد چودھری نے اس تصور کو واضح طورپر مسترد کردیا اور کہا کہ ملک میں کسی بھی قسم کی ایمرجنسی یا صدارتی طرزحکومت کے بارے میں قیاس آرائیاں ”فیک نیوز کلچر“ کا ایک حصہ ہیں جس کی وجہ بعض یوٹیوبرس اور وی لاگرس ہیں۔

ان قیاس آرائیوں کے درمیان مشترکہ اپوزیشن کے ارکان نے کل قومی اسمبلی سکریٹریٹ کو ایک قرارداد پیش کی جس میں ملک میں وفاقی پارلیمانی نظام کو برقرار رکھنے اور مضبوط بنانے کا عہد کیا گیا جس کی گنجائش 1973 کے دستور میں فراہم کی گئی ہے۔

پی ایم ایل این کے سکریٹری جنرل احسن اقبال نے ایک ٹویٹ میں کہا کہ انتخابی دھاندلیوں کے ذریعہ برسراقتدارآئی حکومت نے ملک کو تباہ کردیا ہے اور اندراگاندھی طرز کی ایمرجنسی کے نفاذ اور مختلف فارمولوں کے ذریعہ سسٹم میں تبدیلی کی سرگوشیاں سنی جارہی ہیں۔

ذریعہ
آئی اے این ایس

تبصرہ کریں

Back to top button