کسانوں کے ساتھ حکومت کا سوتیلا سلوک: ریونت ریڈی

صدر ٹی پی سی سی نے الزام عائد کیا کہ حکومت کی جانب سے کرناٹک کے شوگر فیاکٹریز کیلئے گنا منتقل کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر فصلوں پر امدادی قیمت فراہم کی جاتی ہے تو رعیتو بندھو، رعیتو بیمہ، قرض معافی اسکیمس کی ضرورت نہیں رہے گی۔

حیدرآباد: صدر تلنگانہ پردیش کانگریس کمیٹی اے ریونت ریڈی نے ریاستی حکومت پر کسانوں کے ساتھ سوتیلا رویہ اختیار کرنے کا الزام عائد کیا۔ ظہیر آباد میں گنے کے کاشت کاروں کے وفد نے ریونت ریڈی سے ملاقات کرتے ہوئے کسانوں کو درپیش مسائل پر تحریری یادداشت حوالہ کی۔

 بعدازاں کسانوں سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کانگریس کسانوں کے مسائل کو اسمبلی میں اٹھائے گی اور ان مسائل کا حل دریافت کرنے کیلئے حکومت پر دباؤ بنائے  گی۔ انہوں نے حکومت سے خریداری مراکز کے ذریعہ گنا خریدنے کا مطالبہ کیا۔ ریڈی نے کہا کہ حکومت مندروں کی تعمیر اور تزئین نو پر کروڑہا روپے خرچ کررہی ہے، مگر کسانوں کو ریوالونگ فنڈس جاری کرنے سے انکار کررہی ہے۔

 صدر ٹی پی سی سی نے الزام عائد کیا کہ حکومت کی جانب سے کرناٹک کے شوگر فیاکٹریز کیلئے گنا منتقل کیا جارہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر فصلوں پر امدادی قیمت فراہم کی جاتی ہے تو رعیتو بندھو، رعیتو بیمہ، قرض معافی اسکیمس کی ضرورت نہیں رہے گی۔

 انہوں نے طنز کرتے ہوئے کہا کہ جو چیف منسٹر چندر شیکھر راؤ شوگرفیاکٹریز چلانے سے قاصر ہیں وہ کس طرح ریاست کا نظم ونسق چلائیں گے۔ ریونت ریڈی نے حکومت سے کسانوں کی ایک ایک دانہ زرعی پیداوار خرید نے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر حکومت زرعی اجناس خریدنے کے موقف میں نہیں ہے تو پھر پراجکٹس کی تعمیر کا کیا جواز ہے اور اس کا کیا مقصد ہے۔

ذریعہ
منصف نیوز بیورو

تبصرہ کریں

Back to top button