کشمیر میں دہشت گردی کیلئے خاتون ورکرس کی بھرتی :آئی جی

جموں وکشمیر کے سوپور ٹاؤن میں برقعہ پوش خاتون کے سیکوریٹی فورس کے بنکر پر پٹرول بم حملہ نے دہشت پسند گروپس کی مایوس کو اجاگر کیا ہے جو وادی میں تخریبی سرگرمیوں کے لئے خاتون اوور گراؤنڈ ورکرس کی خدمات حاصل کرنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔

سری نگر: جموں وکشمیر کے سوپور ٹاؤن میں برقعہ پوش خاتون کے سیکوریٹی فورس کے بنکر پر پٹرول بم حملہ نے دہشت پسند گروپس کی مایوس کو اجاگر کیا ہے جو وادی میں تخریبی سرگرمیوں کے لئے خاتون اوور گراؤنڈ ورکرس کی خدمات حاصل کرنے پر مجبور ہوگئے ہیں۔

عہدیداروں کے مطابق شمالی کشمیر کے بارہمولہ علاقہ سے تعلق رکھنے والی حسینہ اختر نامی خاتون مبینہ طورپر موافق پاکستان علیحدگی پسند آسیہ اندرابی کے ساتھ ربط میں آئی تھی۔

واضح رہے کہ قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) کی جانب سے 2008 کے دوران غیرقانونی فنڈنگ کیس میں آسیہ اندرابی پہلے سے جیل میں ہیں۔

برقعہ پوش خاتون نے منگل کی شام سوپور میں سیکوریٹی بنکر پر پٹرول پھینکا اور اس کی یہ حرکت سی سی ٹی وی فوٹیج میں قید ہوگئی۔

اس واقعہ میں کوئی زخمی نہیں ہوا اور وہ فرار ہونے میں کامیاب رہی۔ اس خاتون کی تصاویر وادی میں مختلف مقامات پر نصب سی سی ٹی وی کیمروں میں قید ہوگئیں اور بعدازاں پولیس نے مختلف افراد سے بات چیت کرتے ہوئے اس کی شناخت کی۔

38 سالہ حسینہ اختر کے خلاف پہلے سے 2 مقدمات درج ہیں جن میں شمالی کشمیر کے ہندواڑہ میں 2021میں ممنوعہ دہشت پسند گروپ لشکر طیبہ کے پوسٹر چسپاں کرنے کا کیس بھی شامل ہے۔

عہدیداروں نے بتایا کہ سیکوریٹی فورسس کی سخت کارروائیوں کی وجہ سے اب دہشت پسند گروپس خاتون اوور گراؤنڈ ورکرس کی خدمات حاصل کررہے ہیں تاکہ اپنے ناپاک منصوبوں کو عملی جامہ پہناسکیں جن میں گرینیڈ پھینکنا یا قاصد کی حیثیت سے کام کرنا شامل ہے۔

حنفیہ اسکول سے دسویں جماعت کامیاب حسینہ اختر کو جموں و کشمیر پولیس نے 2021 میں گرفتار کیا تھا اور وہ گزشتہ سال سے ضمانت پر ہے۔ سوپور پولیس اس کی گرفتاری کے لئے سرگرم ہوگئی ہے اور کئی مقامات پر دھاوے کئے گئے ہیں۔

آئی جی پولیس (کشمیر رینج) وجئے کمار نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ وہ لشکر طیبہ کے اوور گراؤنڈ ورکر کی حیثیت سے کام کرتی رہی ہے۔ ہم حالیہ عرصہ میں دہشت پسندوں کی جانب سے خواتین کی خدمات کا حصول نوٹ کرتے رہے ہیں۔

گزشتہ سال 2 برقعہ پوش خواتین نے سری نگر کے مضافاتی علاقہ نوگام میں ایک بی جے پی کارکن کے رہائشی گارڈ پر حملہ کرنے میں دہشت گردوں کی مدد کی تھی۔ اس حملہ میں ایک پولیس ملازم ہلاک ہوا تھا۔ ایسی ہی مزید خواتین‘ پولیس کے راڈار پر ہیں اور ہم پیشہ ورانہ انداز میں ان سے نمٹ رہے ہیں۔

تبصرہ کریں

Back to top button