گھر گھر جاکر عوام کے دلوں میں بسنا ہمارا مقصد: سلمان خورشید

اقلیتی طبقے کے لوگوں کے ساتھ ہونے والے ظلم پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ہفتہ کو 50 فیصد سے زیادہ اقلیتوں کے ساتھ ہونے والے مظالم پرسلمان خورشید نے تشویش کا ا ظہار کیا۔ کانگریس تنظیم میں ان طبقات کو 50 فیصد ریزرویشن دینے کا مشورہ دیا گیا۔

ادے پور: کانگریس کے نو سنکلپ چنتن شیویر میں پارٹی کی سماجی انصاف اور بااختیارات بنانے کی کمیٹی نے دلتوں، قابلیوں، خواتین اور اقلیتی طبقے کے لوگوں کے ساتھ ہونے والے ظلم پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے ہفتہ کو 50 فیصد سے زیادہ اقلیتوں کے ساتھ ہونے والے مظالم پر تشویش کا ا ظہار کیا۔ کانگریس تنظیم میں ان طبقات کو 50 فیصد ریزرویشن دینے کا مشورہ دیا گیا۔

کانگریس نے یہاں چل رہے نو سنکلپ شیویر میں سماجی انصاف اور بااختیار بنانے کے پینل کے سربراہ سلمان خورشید، اس کے ارکان دگ وجئ سنگھ، کماری سیلجا، کے راجو اور گردیپ سپل نے ایک پریس کانفرنس میں کہا کہ کانگریس کا مقصد گھر گھر اور ذہنوں میں بسنا ہے۔ پارٹی کو مضبوط پوزیشن میں لانے کے لیے اس طبقے کے لیے پہلے پارٹی کی سطح پر بھرپور شرکت کو یقینی بنانے کا مشورہ دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ کمیٹی نے پارٹی تنظیم میں درج فہرست ذاتوں، قبائل، دیگر پسماندہ طبقات اور اقلیتوں کے لیے ریزرویشن کو 20 فیصد سے بڑھا کر 50 فیصد کرنے کی سفارش کی ہے اور اس کی تجویز کو اعلیٰ ترین پالیسی سازی والی ورکنگ کمیٹی کے سامنے رکھا جائے گا۔

قانون ساز اسمبلیوں اور لوک سبھا میں پارٹی امیدواروں کے انتخاب میں ان طبقات کو ریزرویشن دینے کے سوال پر انہوں نے کہا کہ اس بارے میں کمیٹی میں بات ہوئی ہے۔ یہ عمل کا حصہ ہے، اس لیے اس پر بھی غور و خوض چل رہا ہے۔ تنظیم میں کس طبقے کو کتنا ریزرویشن دیا جائے گا، اس کا فیصلہ بعد میں کیا جائے گا۔

انہوں نے ذات پر مبنی مردم شماری کا مطالبہ کیا اور کہا کہ پارٹی ذات پات کی بنیاد پر مردم شماری کا مطالبہ بھی کرے گی۔ نیشنل اسٹوڈنٹ یونین آف انڈیا (این ایس یو آئی)، یوتھ کانگریس اور مہیلا کانگریس کے اراکین نے بھی کمیٹی میں کھل کر بات رکھیں۔

تبصرہ کریں

Back to top button