وسط مدتی انتخابات کی پیشکش کا غلط مطلب نکالا گیا: عمران خان

خیال کیا جاتا ہے وسط مدتی انتخابات پر مخلوط حکومت سے بات چیت کی ان کی پیشکش مبینہ طورپر الٹی پڑجانے کے بعد صورتحال کو واضح کرنے کی کوشش کے طوپر عمران خان نے یہ بیان دیا ہے۔

لاہور: پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے صدرعمران خان نے زور دے کر کہا ہے کہ فوری انتخابات کرانے کی ان کی پیشکش کو غلط سمجھا گیا، ایسا انہوں نے ملک کے وسیع تر مفاد کو مدنظر رکھتے ہوئے کہاتھا۔

خیال کیا جاتا ہے وسط مدتی انتخابات پر مخلوط حکومت سے بات چیت کی ان کی پیشکش مبینہ طورپر الٹی پڑجانے کے بعد صورتحال کو واضح کرنے کی کوشش کے طوپر انہوں نے یہ بیان دیا ہے۔

اس کے بعد انہوں نے وفاقی حکومت کے "آپریٹرز” کو یہ احساس دلانے کی تلقین کی کہ ملک تیزی سے دیوالیہ پن کی طرف بڑھ رہا ہے اور ان سے 22 کروڑ لوگوں کو نقصان سے بچانے کے لیے کام کرنے کی اپیل کی۔

’بول نیوز‘ کے ساتھ ایک انٹرویو کے دوران عمران نے اپنے موقف کو نئی جہت دی۔ پی ٹی آئی کے سربراہ نے کہا کہ وہ پنجاب اور کے پی اسمبلیوں کو تحلیل کرنے میں تاخیر کر سکتے ہیں اگر سیاسی رہنما میز پر آنے اورطے کرنے کے لئےکہ زیادہ سے زیادہ اگلے مارچ کے آخر تک عام انتخابات کرانے پر راضی ہوں۔

چونکہ مارچ رمضان کا مہینہ ہوگا، خان کی نئی تجویز کا مطلب یہ ہے کہ پی ڈی ایم حکومت کو فوری طور پر انتخابات کی تاریخ کا اعلان کرنا چاہیے، تمام اسمبلیاں تحلیل کر کے عام انتخابات کا مطالبہ کرنا چاہیے۔ لیکن انہوں نے کہا کہ انتخابات روزے کے مہینے میں بھی ہو سکتے ہیں۔

اس سے قبل، اپنی زمان پارک رہائش گاہ سے ویڈیو لنک کے ذریعے خیبرپختونخوا اسمبلی کے اراکین اسمبلی سے بات کرتے ہوئے، انہوں نے زور دے کر کہا کہ پی ٹی آئی "اس مہینے پنجاب اور کے پی اسمبلیوں کو تحلیل کرنے اورپاکستان میں 66 فیصد حصوں کو انتخابات میں لے جانے کے لئے پوری طرح تیار ہے۔

...رشتوں کا انتخاب
...اب اور بھی آسان

لڑکی ہو یا لڑکا، عقد اولیٰ ہو یا عقد ثانی
اب ختم ہوگی آپ کی تلاش اپنے ہمسفر کی

آج ہی مفت رجسٹر کریں اور فری سبسکرپشن حاصل کرکے منصف میٹریمونی کے تمام فیچرس سے استفادہ کریں۔

آج ہی مفت رجسٹر کریں اور منصف میٹریمونی کے تمام فیچرس سے استفادہ کریں۔

www.munsifmatrimony.com

تبصرہ کریں

Back to top button