ایشیاء

کل سے پٹرول کی قیمت میں اضافہ کا امکان

پڑوسی ملک پاکستان میں مہنگائی سے متاثرہ عوام کو اگلے پندرہ دن میں پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ سے ایک اور بڑا جھٹکا لگ سکتا ہے۔

کراچی: پڑوسی ملک پاکستان میں مہنگائی سے متاثرہ عوام کو اگلے پندرہ دن میں پٹرول کی قیمتوں میں اضافہ سے ایک اور بڑا جھٹکا لگ سکتا ہے۔

متعلقہ خبریں
پاکستان اصل مسئلہ نہیں: غلام نبی آزاد
آخر پاکستان پر بات کیوں ہورہی ہے جب انتخابات ہندوستان میں ہورہے ہیں:پرینکا
پاکستانی آئی ایس آئی کے لئے جاسوسی، ایک پنجابی گرفتار
دوہری مہارت کے کھلاڑی
رمضان میں ہند۔ پاک مچھیروں کی رہائی کا مطالبہ

میڈیا رپورٹس میں خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اگلے پندرہ دنوں میں پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں 10 سے 14 روپے فی لیٹر تک اضافہ ہو سکتا ہے۔انڈسٹری ذرائع کے مطابق عالمی منڈیوں میں تیل کی قیمتوں میں اضافے کے پیش نظر حکومت پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرسکتی ہے۔

اگر حکومت ایکسچینج ریٹ کے نقصان کے لیے بھی ایڈجسٹ کرتی ہے تو یہ اضافہ 14 روپے فی لیٹر تک جا سکتا ہے۔ملک کے آئل سیکٹر کے کام کے مطابق ایکسچینج ریٹ نقصان ایڈجسٹمنٹ کے ساتھ قیمتوں کے اگلے جائزے کے لیے پٹرول کی ایکس ڈپو قیمت 14.77 روپے فی لیٹر مقرر کی گئی ہے۔

پٹرول کی موجودہ ایکس ڈپو قیمت 272 روپے فی لیٹر ہے، جو کہ 286.77 روپے فی لیٹر تک جا سکتی ہے، اگر حکومت تیل کی عالمی قیمتوں اور شرح مبادلہ کے نقصانات کے اثرات سے گزرنے کا فیصلہ کرتی ہے۔اگر حکومت زر مبادلہ کے خسارے کو ایڈجسٹ کرنا چھوڑ دے تو بھی اسے تیل کی عالمی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے تیل کی قیمتوں میں اضافے کا سامنا کرنا پڑے گا۔

پٹرول کی قیمت میں متوقع اضافہ ٹیکس کی موجودہ شرح کی بنیاد پر کیا گیا ہے۔جیو نیوز کی ایک رپورٹ کے مطابق حکومت پٹرول پر 50 روپے فی لیٹر صفر جنرل سیلز ٹیکس لگا رہی ہے۔

پٹرول کی قیمت میں متوقع اضافہ پاکستان اسٹیٹ آئل (پی ایس او) کی 5 روپے فی لیٹر ایکسچینج نقصان کی ایڈجسٹمنٹ پر مبنی ہے، جس کی وجہ حکومت ہے کیونکہ اس نے قیمتوں کو برقرار رکھنے کے لیے ماضی میں ایکسچینج ریٹ ایڈجسٹمنٹ کو شامل نہیں کیا تھا۔

گزشتہ ڈھائی مہینوں میں ڈالر کے مقابلے روپے کی قدر میں بہت زیادہ کمی کے بعد جب بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی شرائط کے تحت مارکیٹ پر مبنی شرح مبادلہ کی اجازت دی گئی تھی تو پی او ایل کی قیمتیں زیادہ تھیں۔

a3w
a3w