مشرق وسطیٰ

حماس اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان کوئی اہم فرق نہیں :نیتن یاہو

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا ہے کہ حماس اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان کوئی اہم فرق نہیں ہے۔

تل ابیب: اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا ہے کہ حماس اور فلسطینی اتھارٹی کے درمیان کوئی اہم فرق نہیں ہے۔

متعلقہ خبریں
نیتن یاہو نے کم وسائل میں بھی لڑنے کا اعلان کیا
جنگ بندی مذاکرات میں پیش رفت نہیں ہوپائی: حماس
اسرائیل میں ویسٹ نائل بخار سے مرنے والوں کی تعداد 31 ہو گئی
غزہ میں پہلا روزہ، اسرائیل نے فلسطینیوں کو مسجد اقصیٰ میں داخل ہونے سے روک دیا
فلسطینی فوٹو جرنلسٹ نے فرانس کا بڑا انعام ’فریڈم پرائز‘ جیت لیا

نیتن یاہو نے خارجہ اور سلامتی کمیٹی کے اجلاس کے دوران کہا کہ حماس اور فلسطینی اتھارٹی میں فرق یہ ہے کہ حماس ہمیں فوری طور پر تباہ کرنا چاہتی ہے اور فلسطینی اتھارٹی ہمیں مرحلہ وار تباہ کرنا چاہتی ہے۔

ایک روز قبل اتوار کو نیتن یاہو نے حماس کے جنگجوؤں سے ہتھیار ڈالنے کا مطالبہ کیا اور کہا تھا کہ غزہ میں جاری جنگ کی توسیع کے ساتھ حماس کا خاتمہ اب قریب ہے۔ جنگ ابھی جاری ہے لیکن یہ حماس کے لیے انجام کی شروعات ہے۔

العربیہ کے مطابق انہوں نے مزید کہا کہ گزشتہ چند دنوں میں حماس کے "درجنوں” ارکان نے اسرائیلی فورسز کے سامنے ہتھیار ڈال دیے۔ تاہم اسرائیلی فوج نے کسی جنگجو کے ہتھیار ڈالنے کا کوئی ثبوت شائع نہیں کیا۔ حماس نے اسرائیلی وزیر اعظم کے الزامات کی یکسر تردید کردی ہے۔

نیتن یاہو کی اس کال پر تبصرہ کرتے ہوئے حماس کے سیاسی بیورو کے رکن عزت الرشق نے کہا کہ تاریخ غزہ کے بارے میں ہماری فتح کو واضح طور پر لکھے گی۔ انہوں نے مزید کہاکہ غزہ میں قابض اسرائیل کا خاتمہ شروع ہوا ہے۔

اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ 7 اکتوبر سے جنگ شروع ہے۔ اسرائیلی بمباری میں غزہ کی اکثر حصہ ملیامیٹ کردیا گیا ہے۔ 18000 سے زیادہ فلسطینی شہید ہوگئے ہیں۔

a3w
a3w