دہلی

جسٹس مشرا نے عمر خالد کی درخواست ضمانت پر سماعت سے خود کو الگ کیا

سپریم کورٹ نے دہلی فسادات کے الزام میں گرفتار جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے سابق طالب علم عمر خالد کی درخواست ضمانت پر سماعت بدھ کے روز ملتوی کر دی۔

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے دہلی فسادات کے الزام میں گرفتار جواہر لال نہرو یونیورسٹی کے سابق طالب علم عمر خالد کی درخواست ضمانت پر سماعت بدھ کے روز ملتوی کر دی۔

متعلقہ خبریں
سپریم کورٹ کا تلنگانہ ہائیکورٹ کے فیصلہ کو چالینج کردہ عرضی پر سماعت سے اتفاق
کانسٹی ٹیوشن کلب حملہ کیس، عمرخالد، دہلی ہائی کورٹ سے رجوع
عصمت دری کے ملزم تھانہ انچارج کی ضمانت منسوخ
سپریم کورٹ میں نوٹ برائے ووٹ کیس کی سماعت ملتوی
26ہزار اساتذہ کی تقرری منسوخی پر روک لگانے سے سپریم کورٹ کا انکار

جسٹس پرشانت کمار مشرا نے جسٹس اے ایس بوپنا کی سربراہی والی دو ججوں کی بنچ سے خود کو الگ کرلیا ، جس کے بعد سماعت 17 اگست تک ملتوی کر دی گئی۔

جسٹس بوپنا نے کہا کہ "کچھ مسئلہ ہے” جس کی وجہ سے اس معاملے کی سماعت 17 اگست کو دوسری بنچ کرے گی۔

درخواست گزار عمر خالد ستمبر 2020 سے عدالتی تحویل میں جیل میں بند ہے۔

عمر خالد نے اکتوبر 2022 میں دہلی ہائی کورٹ کی طرف سے ضمانت مسترد ہونے کے بعد سپریم کورٹ سے رجوع کیا تھا۔ ان کی درخواست پر عدالت عظمی نے مئی 2023 میں دہلی پولیس کو نوٹس جاری کیا تھا۔

اس سے قبل مارچ 2022 میں کڑکڑڈوما کی ضلعی عدالت نے عمر خالد کی ضمانت کی درخواست مسترد کر دی تھی۔

دہلی پولس نے عمر خالد کو ستمبر 2020 میں گرفتار کیا تھا۔ انہیں فسادات کی سازش کرنے، غیر قانونی اجتماع کے علاوہ غیر قانونی سرگرمیاں (انسداد) ایکٹ (یو اے پی اے) کی دفعات کے تحت گرفتار کیا گیا تھا۔