دہلی

کسانوں سے مودی کے وعدے جھوٹے نکلے: کھرگے

کھرگے نے ٹویٹ کیا، "16 سال پہلے، کانگریس-یو پی اے حکومت نے 3.73 کروڑ کسانوں کے 72,000 کروڑ روپے کے زرعی قرضے اور سود معاف کیا تھا۔ یہ کانگریس کی ضمانت تھی جو پوری ہوئی۔

نئی دہلی: کانگریس کے صدر ملک ارجن کھرگے نے کہا کہ وزیر اعظم نریندر مودی نے کسانوں سے جو وعدے کئے تھے انہیں پورا نہ کرکے ملک کے کسانوں کو دھوکہ دیا ہے۔

متعلقہ خبریں
انتخابی ضابطہ اخلاق لاگوہونے سے قبل کسانوں کے مطالبات قبول کرلئے جائیں: جگجیت سنگھ
کانگریس کی گھر گھر گارنٹی پہل کی شروعات
”بھارت میراپریوار۔ میری زندگی کھلی کتاب“:مودی
وزیر اعظم کے ہاتھوں اے پی میں این اے سی آئی این کے کیمپس کا افتتاح
اڈانی مسئلہ پر کانگریس سے وضاحت کامطالبہ، سرمایہ کاری کے دعوؤں پر شک و شبہات

کھرگے نے ٹویٹ کیا، "16 سال پہلے، کانگریس-یو پی اے حکومت نے 3.73 کروڑ کسانوں کے 72,000 کروڑ روپے کے زرعی قرضے اور سود معاف کیا تھا۔ یہ کانگریس کی ضمانت تھی جو پوری ہوئی۔ صرف کانگریس اپنی ضمانت پوری کرتی ہے۔

مودی پر کسانوں سے کیے گئے وعدوں کو پورا نہ کرنے کا الزام لگاتے ہوئے انہوں نے کہا، "مودی جی نے کسانوں سے دو بڑے وعدے کیے – پہلا، لاگت + 50 فیصد ایم ایس پی، دوسرا 2022 تک کسانوں کی آمدنی دوگنی کرنا، لیکن مودی جی کے دونوں وعدے، ’گارنٹی‘ جعلی نکلی اور کسانوں کی حالت ابتر ہوگئی۔‘‘

انہوں نے کہا، "کانگریس نے کسانوں سے ایک بار پھر وعدہ کیا ہے – وہ 15 کروڑ کسان کنبوں کو ایم ایس پی کی قانونی ضمانت دے گی۔ جئے کسان جئے ہندوستان۔

دریں اثنا، پارٹی نے اپنے آفیشل پیج پر بے روزگاری پر بھی حکومت پر حملہ کیا اور ٹویٹ کیا، "ملک میں بے روزگاری کے بارے میں حقیقت جانیں۔ ہریانہ میں چپڑاسی کے 12 عہدوں پر بھرتی نکلی۔ ان 12 آسامیوں کے لیے 9000 سے زائد امیدواروں نے درخواست دی۔

بے روزگاری کی صورتحال اتنی سنگین ہے کہ چپڑاسی کی نوکریوں کے لیے درخواست دینے والوں میں سے بہت سے بی ٹیک اور ایم ٹیک ڈگری ہولڈرز ہیں۔ بی جے پی ملک کے نوجوانوں کی دشمن ہے کیونکہ نہ تو وہ نوکریاں دے پاتی ہے اور نہ ہی پیپرز کو لیک ہونے سے بچا پارہی ہے۔ بی جے پی حکومتوں نے نوجوانوں کے مستقبل کو بے روزگاری کے اندھیروں میں جھونک دیا ہے۔