دہلی
ٹرینڈنگ

متھرا عیدگاہ مسجد میں سروے پر پابندی لگانے سے سپریم کورٹ کاانکار

متھرا شاہی عیدگاہ مسجد ٹرسٹ کی جانب سے جمعرات کو سی جے آئی کے سامنے یہ سوال اٹھایا گیا کہ آج الہ آباد ہائی کورٹ نے متھرا میں شری کرشن جنم بھومی شاہی عیدگاہ مسجد کے سروے کے لیے کورٹ کمشنر کی تقرری کا حکم دیا ہے۔

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے متھرا عیدگاہ مسجد میں سروے پر پابندی لگانے سے صاف انکار کر دیا ہے۔ اس معاملے کی سماعت 9 جنوری کو ہونے والی ہے۔ آپ کو بتا دیں کہ جمعرات کو الہ آباد ہائی کورٹ نے متھرا عیدگاہ مسجد میں سروے کا حکم دیا تھا۔

متعلقہ خبریں
وضوخانے کا سروے، انجمن انتظامیہ کو نوٹس
سپریم کورٹ کا تلنگانہ ہائیکورٹ کے فیصلہ کو چالینج کردہ عرضی پر سماعت سے اتفاق
نیٹ تنازعہ، سی بی آئی تحقیقات سے سپریم کورٹ کا انکار
دہلی میں شیومندر کا انہدام روکنے سے سپریم کورٹ کا انکار
نیٹ امتحان، امیدواروں کے رعایتی نشانات منسوخ، متاثرہ طلبہ کے لئے دوبارہ امتحان (تفصیلی خبر)

 اس حکم کے خلاف سپریم کورٹ میں درخواست دائر کی گئی تھی۔ آج ہونے والی سماعت کے دوران عدالت نے کہا ہے کہ درخواست گزار تعطیلات کے دوران بھی سپریم کورٹ میں درخواست دائر کر سکتے ہیں۔

درحقیقت متھرا شاہی عیدگاہ مسجد ٹرسٹ کی جانب سے جمعرات کو سی جے آئی کے سامنے یہ سوال اٹھایا گیا کہ آج الہ آباد ہائی کورٹ نے متھرا میں شری کرشن جنم بھومی شاہی عیدگاہ مسجد کے سروے کے لیے کورٹ کمشنر کی تقرری کا حکم دیا ہے۔

 اگر سپریم کورٹ جلد ہی شاہی عیدگاہ مسجد ٹرسٹ اور یوپی سنی سنٹرل وقف بورڈ کی درخواست پر سماعت نہیں کرتی ہے تو الہ آباد ہائی کورٹ اس معاملہ میں سماعت جاری رکھے گی۔ نچلی عدالت کے بجائے خود کو چیلنج کیا گیا ہے۔

 شاہی عیدگاہ مسجد ٹرسٹ اور یوپی سنی سنٹرل وقف بورڈ نے سپریم کورٹ میں اس تنازعہ سے متعلق تمام 18 درخواستوں کو سماعت کے لیے منتقل کرنے کے الہ آباد ہائی کورٹ کے 26 مئی کے حکم کو سپریم کورٹ میں چیلنج کیا ہے۔

واضح رہے کہ متھرا کے شری کرشن جنم بھومی اور شاہی عیدگاہ مسجد تنازعہ کیس میں الہ آباد ہائی کورٹ نے متنازعہ جگہ کا سروے ایڈوکیٹ کمشنر کے ذریعے کرانے کی مانگ کو قبول کر لیا ہے۔

 الہ آباد ہائی کورٹ نے جمعرات کو شاہی مسجد عیدگاہ کے اے ایس آئی کے سروے کو منظوری دے دی ہے۔ جسٹس میانک کمار جین کی سنگل بنچ نے یہ فیصلہ دیا۔ گیانواپی تنازعہ کے خطوط پر ایڈوکیٹ کمشنر سے متنازعہ جگہ کے سروے کا مطالبہ کرتے ہوئے ایک درخواست دائر کی گئی تھی۔

قابل ذکر ہے کہ الہ آباد ہائی کورٹ ایودھیا تنازعہ کی طرز پر متھرا عیدگاہ مسجد تنازعہ سے متعلق 18 عرضیوں کی براہ راست سماعت کر رہی ہے۔ گیانواپی کیس میں بھی ایڈوکیٹ کمشنر کی جانب سے گیانواپی احاطے کی تحقیقات کا حکم دینے کے بعد ہی عدالتی کارروائی شروع ہوئی۔ اگر کل ایڈوکیٹ کمشنر سروے کرانے کے حق میں فیصلہ دیتے ہیں تو متھرا کا معاملہ زور پکڑ سکتا ہے۔

جسٹس میانک کمار جین نے اس سے قبل 16 نومبر کو متعلقہ فریقوں کو سننے کے بعد فیصلہ محفوظ رکھا تھا۔ یہ درخواست لارڈ شری کرشنا ویراجمان اور سات دیگر افراد نے ایڈوکیٹ ہری شنکر جین، وشنو شنکر جین، پربھاش پانڈے اور دیوکی نندن کے ذریعے دائر کی تھی، جس میں دعویٰ کیا گیا تھا کہ بھگوان کرشن کی جائے پیدائش اس مسجد کے نیچے موجود ہے اور اس طرح کے بہت سے آثار ہیں جو ثابت کرتے ہیں کہ مسجد۔ ایک ہندو مندر ہے۔

a3w
a3w