ملبے میں پیدا ہونے والی شامی بچی کا نام ’’ آیت’’ رکھا گیا

اس بچی کا نام اب آیت رکھا گیا ہے یعنی اللہ کی نشانی، اور اس کی والدہ کا نام عفرا ابو ہادیہ تھا، بچی کو ایک اسپتال میں طبی نگہداشت کے لیے رکھا گیا ہے، اور صحت یاب ہونے پر اس کے بڑے چچا صلاح البدران اپنے ساتھ لے جائیں گے۔

حلب (شام): شام میں آنے والے تباہ کن زلزلے میں جہاں دیگر ہزاروں لوگوں کی جانیں تلف ہوئی ہیں، وہاں اپنی نوعیت کا ایک انوکھا واقعہ بھی رونما ہوا۔ شمال مغربی شام کے ایک قصبے جندیرس کا ایک اپارٹمنٹ جب زلزلے کے جھٹکے برداشت نہ کر سکا۔

اور منہدم ہو گیا تو اس کے ملبے تلے دب کر ایک پورا خاندان مٹ گیا، تاہم اسی ملبے تلے حیرت انگیز طور پر ایک نئی زندگی روشنی کی طرح پھوٹی، اور مرنے سے قبل خاتون کے ہاں ایک بچی نے جنم لے لیا۔

سوشل میڈیا پر ویڈیو کے ساتھ جب یہ خبر سامنے آئی تو دنیا بھر میں لوگ اس کی طرف متوجہ ہو گئے، اور بچی کے لیے افسوس کا اظہار کیا گیا، جو اس دنیا میں آتے ہی یتیم و یسیر ہو گئی تھی۔

اس بچی کا نام اب آیت رکھا گیا ہے یعنی اللہ کی نشانی، اور اس کی والدہ کا نام عفرا ابو ہادیہ تھا، بچی کو ایک اسپتال میں طبی نگہداشت کے لیے رکھا گیا ہے، اور صحت یاب ہونے پر اس کے بڑے چچا صلاح البدران اپنے ساتھ لے جائیں گے۔

اس شامی بچی نے زلزلے میں اپنے ماں باپ کے علاوہ چار بہن بھائیوں کو کھویا ہے، جب اسے ملبے تلے نکالا گیا تو وہ اپنی مری ہوئی ماں کے ساتھ آنول نال سے جڑی ہوئی تھی۔