دہلی

بیروزگاری سے تنگ نوجوان بیرونی ممالک میں یرغمال بن رہے ہیں: کنہیا کمار

کنہیا کمار نے کہا کہ اگر ملک کے نوجوان اپنے ملک کے لیے شہادت دیتے ہیں تو یہ حب الوطنی ہے لیکن ہندوستانی نوجوانوں کو دوسرے ملک میں لڑنے کے لئے جانے کی کیا ضرورت ہے؟

نئی دہلی: کانگریس نے کہا ہے کہ ملک میں بے روزگاری اپنے عروج پر ہے اور روزی روٹی کے بحران سے دوچار نوجوانوں کو روزگار کے نام پر روس اور اسرائیل جیسے ممالک میں بھیجا جا رہا ہے جہاں انہیں یرغمال بنا کر کام کرنے پر مجبور کیا جا رہا ہے۔

متعلقہ خبریں
سٹی پولیس کے رویہ پر مادھوی لتا کی ناراضگی
میانمار میں جھڑپیں : ہزاروں روہنگیا مسلمان بنگلہ دیش کی سرحد پر پہنچ گئے
اسماعیل ہنیہ کی معاہدے سے متعلق شراط
تیل کی قیمتیں مزید بڑھنے کا امکان، سعودی عرب، تیل کی پیداوار میں کٹوتی جاری رکھے گا
صفا بیت المال سے تیس بیروزگار نوجوانوں میں ٹو وہیلرس کی تقسیم

 کانگریس کی اعلیٰ ترین پالیسی ساز تنظیم کانگریس ورکنگ کمیٹی کے مدعو مستقل رکن اور پارٹی کے طلبہ ونگ این ایس یو آئی کے انچارج کنہیا کمار نے جمعہ کو یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستانی نوجوان روس میں یرغمال بنائے گئے ہیں ان کی وجہ سے ملک میں نوجوانوں کے لیے ‘ڈیڈ پیریڈ’ جاری ہے۔

کمار نے کہا "روس کے پاس اپنی مستقل فوج نہیں ہے اور وہاں کی فوج ٹھیکے پر چلتی ہے۔ جیسا کہ اب ہمارے ملک میں ‘اگنی ویر’ کا ماڈل لایا گیا ہے۔ گجرات کا ایک نوجوان سویلین کام کے لیے روس گیا تھا لیکن اس کی موت واقع ہوگئی ہے۔ اس حساس معاملے پر چاروں طرف خاموشی ہے۔”

کنہیا کمار نے کہا کہ اگر ملک کے نوجوان اپنے ملک کے لیے شہادت دیتے ہیں تو یہ حب الوطنی ہے لیکن ہندوستانی نوجوانوں کو دوسرے ملک میں لڑنے کے لئے جانے کی کیا ضرورت ہے؟ لیکن ایسا اس لئے ہو رہا ہے کہ ہمارے ملک میں نوجوانوں کے مستقبل سے کھیلا جا رہا ہے۔

"گزشتہ 10 برسوں میں بے روزگاری کی شرح دوگنی ہو گئی ہے۔ مرکزی محکموں میں لاکھوں اسامیاں خالی ہیں اور سرکاری شعبوں کی حالت انتہائی خراب ہے۔”

کانگریس لیڈر نے کہا کہ ملک میں بے روزگاری کی صورتحال ایسی ہے کہ ہر گھنٹے میں دو نوجوان خودکشی کر رہے ہیں، اگر مودی حکومت ہر سال دو کروڑ نوکریاں دیتی تو نوجوانوں کو بیرون ملک نہ جانا پڑتا۔

 یہ ملک کے نوجوانوں کی بے بسی ہی ہے کہ پردیس کے خواب دکھا کر نوجوانوں کو مزدوری کے لیے اسرائیل بھیجا جا رہا ہے اور ملک کے نوجوانوں کی زندگیوں سے کھیلا جا رہا ہے، اس سب کے درمیان آپ کے سامنے ‘وشوا گرو’ ہونے کا دعویٰ کیا جاتا ہے۔ لیکن آپ ‘وش گرو’ ہیں کیونکہ آپ نوجوانوں کے لیے زہر ہیں، ان کے مستقبل کے لیے زہر گھول رہے ہیں۔