امریکہ و کینیڈا

امریکہ میں اسقاط حمل پر پابندی کا عارضی حکم نامہ جاری

امریکی سپریم کورٹ نے گزشتہ سال رو بنام ویڈ کو پلٹ دیا تھا جس سے خواتین کے لیے اسقاط حمل کے حقوق کے آئینی تحفظات ختم ہوگئے تھے۔

واشنگٹن: امریکی ریاست ٹیکساس کے ایک جج نے جمعہ کو یہاں اسقاط حمل پر پابندی کا عارضی حکم نامہ جاری کرتے ہوئے کہا کہ یہ حمل کے دوران سنگین پیچیدگیوں والی خواتین کے لیے پابندی سے مطابقت رکھتا ہے۔

متعلقہ خبریں
نابالغ لڑکی کی عصمت ریزی اور اسقاط حمل کیس
امریکہ کا عمران خان اور دیگر قیدیوں کی حفاظت پر اظہارِ تشویش
اسرائیل اور حماس کی لڑائی میں امریکہ کا فوج بھیجنے کا کوئی ارادہ نہیں: کملا ہیرس
امریکی اسٹوڈنٹ ویزاکی طلب میں زبردست اضافہ، تاحال 5 لاکھ درخواستوں کو قطعیت
وزیر فینانس نرملا سیتا رمن کی کل امریکہ روانگی

ٹریوس کاؤنٹی ڈسٹرکٹ جج جیسیکا منگرم نے بھی ٹیکساس گورنمنٹ کی جانب سے مقدمہ خارج کرنے کی درخواست کو مسترد کر دیا۔ صوبے میں اسقاط حمل پر پابندی سے متاثرہ خواتین کی جانب سے دائر کیا جانے والا یہ پہلا مقدمہ ہے۔

 امریکی سپریم کورٹ نے گزشتہ سال رو بنام ویڈ کو پلٹ دیا تھا جس سے خواتین کے لیے اسقاط حمل کے حقوق کے آئینی تحفظات ختم ہوگئے تھے۔

صوبائی اٹارنی جنرل کے دفتر کے ترجمان پیگے ولی نے ایک ای میل میں کہا، "ٹرائل کورٹ کا حکم امتناعی غیر موثر ہے، اور جمود برقرار ہے۔” ٹیکساس کے قانون کے مطابق حمل کے چھ ہفتوں کے بعد طبی ہنگامی حالات کو چھوڑ کر تمام طرح کے اسقاط حمل پر روک ہے جن کی تعریف ریاستی قانون میں نہیں ہے۔

ٹیکساس میں اسقاط حمل کروانا یا اس کی کوشش کرنا دوسرے درجے کا جرم ہے، جس کی سزا عمر قید اور 10,000 امریکی ڈالر تک جرمانہ ہو سکتا ہے۔

مینگرم نے فیصلہ دیا کہ مجرمانہ الزامات کے خطرے سے ڈرنے والے ڈاکٹروں کو "ٹیکساس میں حاملہ خواتین کو اسقاط حمل کی دیکھ بھال کی فراہمی کو روکنے یا اس میں تاخیر کرنے پر مجبور کیا جا سکتا ہے جن کے لیے اسقاط حمل موت کو روکے گا یا ان کی صحت کو خطرہ کم کرے گا۔”

جج نے کہا کہ "نیک نیتی سے فیصلہ لینے پر” ڈاکٹروں کے خلاف مقدمہ نہیں چلایا جا سکتا۔ مقامی تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ یہ مقدمہ دیگر امریکی ریاستوں میں اسقاط حمل پر پابندی کا ایک ماڈل ہو سکتا ہے۔