دہلی

ای ڈی نے سنجے سنگھ کے 2 ساتھیوں کو سمن بھیجا

فی الحال ایم پی سنگھ تحقیقاتی ایجنسی کی تحویل میں ہیں۔ جمعرات کو انہیں دہلی ایکسائز پالیسی کیس میں 10 اکتوبر تک ای ڈی ریمانڈ پر بھیج دیا گیا۔

نئی دہلی: انفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) نے عام آدمی پارٹی (اے اے پی) کے لیڈر اور راجیہ سبھا ممبر پارلیمنٹ سنجے سنگھ کے دو ساتھیوں کو دہلی ایکسائز پالیسی کیس (اب منسوخ) کے سلسلے میں پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا ہے۔

متعلقہ خبریں
جیل میں کجریوال سے دہشت گرد جیسا سلوک: بھگونت مان
کویتا کی عدالتی تحویل میں توسیع
منیش سسوڈیہ کی درخواست عبوری ضمانت پر ایجنسیوں کو نوٹس
اگزٹ پولس پر مکمل امتناع کے لئے سنجے سنگھ کا مطالبہ
گیانگسٹر نعیم کی ضبط کردہ اراضیات کی تحقیقات کرانے کا مطالبہ

ای ڈی نے سنگھ کے جن دو ساتھیوں کو سمن بھیجا ہے ان میں سے ایک سرویش مشرا جمعہ کو دہلی میں ای ڈی کے دفتر میں پیش ہوئے۔ سرویش مشرا نے ای ڈی آفس کی طرف جاتے ہوئے نامہ نگاروں کو بتایا کہ ’’سچائی کی فتح ہوگی۔ ذرائع نے بتایا کہ ان دونوں افراد کو دہلی ایکسائز پالیسی سے متعلق منی لانڈرنگ کیس میں جاری تحقیقات میں شامل ہونے کے لیے بلایا گیا ہے۔

ذرائع کے مطابق تحقیقاتی ایجنسی اس معاملے پر ان کے بیانات ریکارڈ کرے گی۔ فی الحال ایم پی سنگھ تحقیقاتی ایجنسی کی تحویل میں ہیں۔ جمعرات کو انہیں دہلی ایکسائز پالیسی کیس میں 10 اکتوبر تک ای ڈی ریمانڈ پر بھیج دیا گیا۔ چہارشنبہ کو انہیں دہلی میں ان کی رہائش گاہ پر 10 گھنٹے سے زیادہ پوچھ گچھ کے بعد حراست میں لے لیا گیا تھا۔

آج مشرقی دہلی میں غازی پور لینڈ فل سائٹ کا دورہ کرتے ہوئے دہلی کے وزیر اعلی اروند کیجریوال نے کہا کہ سارا ایکسائز گھوٹالہ ‘فرضی’ ہے۔ انہوں نے کہا، ’’تحقیقاتی ایجنسیوں کے پاس ایک پیسے کا بھی ثبوت نہیں ہے۔ پہلے کہا جاتا تھا کہ بس گھوٹالا، کلاس روم گھوٹالا، بجلی، پانی اور سڑک گھپلے اور تمام تحقیقات کی گئیں، لیکن کچھ نہیں ملا۔

بھارتیہ جنتا پارٹی (بی جے پی) پر نشانہ لگاتے ہوئے، مسٹر کیجریوال نے کہا، "اگر کچھ دنوں کے بعد ایکسائز گھوٹالے سے کچھ نہیں نکلا، تو بی جے پی کچھ نیا لے کر آئے گی۔ ان کے ارادے اچھے نہیں ہیں، وہ ہمیں کام کرنے نہیں دینا چاہتے۔

a3w
a3w