کیا سورج کا ایک بڑا حصہ ٹوٹ گیا ہے؟ سائنسداں حقیقت جان کر حیران

ڈاکٹر سکوف نے گزشتہ ہفتہ ایک ٹویٹ میں کہا کہ قطبی بھنور کے بارے میں بات کریں! شمالی اہمیت کا مواد ابھی مرکزی تنت سے الگ ہوا ہے اور اب ہمارے ستارے کے شمالی قطب کے گرد ایک بہت بڑے قطبی بھنور میں گھوم رہا ہے۔

حیدرآباد: سورج نے ہمیشہ ماہرین فلکیات کو متوجہ کیا ہے اور اب ایک نئی پیشرفت نے سائنسدانوں کو حیران کردیا ہے۔ سورج کا ایک بڑا ٹکرا اس کی سطح سے ٹوٹ گیا ہے اور اس نے قطب شمالی کے گرد بھنور کی طرح ایک طوفان کردیا ہے۔

جبکہ سائنسداں تجزیہ کرنے کی کوشش کررہے ہیں کہ یہ کیسے ہوا، اس واقعہ کی ویڈیو نے خلائی برادری کو پریشان کرکے رکھ دیا ہے۔

اس واقعہ کو ناسا کے جیمز ویب ٹیلی سکوپ نے قید کیا اور اُسے گزشتہ ہفتہ خلائی موسم کی پیشن گوئی کرنے والی ڈاکٹر تمیتا اسکوف نے ٹوئٹر پر شیئر کیا۔ سورج شمسی شعلوں کو خارج کرتا رہتا ہے جو کبھی کبھی زمین پر مواصلات کو متاثر کرتا ہے، لہٰذا سائنسداں تازہ ترین واقعہ کے بارے میں زیادہ فکرمند ہیں۔

ڈاکٹر سکوف نے گزشتہ ہفتہ ایک ٹویٹ میں کہا کہ قطبی بھنور کے بارے میں بات کریں! شمالی اہمیت کا مواد ابھی مرکزی تنت سے الگ ہوا ہے اور اب ہمارے ستارے کے شمالی قطب کے گرد ایک بہت بڑے قطبی بھنور میں گھوم رہا ہے۔ یہاں کے مضمرات سورج کی 55° سے اوپر کی فضا کی حرکیات کو سمجھنے کیلئے زیادہ نہیں کہا جاسکتا۔!

ناسا کے مطابق ایک اہمیت سورج کی سطح سے باہر کی طرف پھیلی ہوئی ایک بڑی روشن خصوصیت ہے۔ اس طرح کی کئی مثالیں ماضی میں سامنے آچکی ہیں لیکن اس نے سائنسی برادری کو چونکادیا ہے۔

ڈاکٹر سکوف نے بعد میں ایک ٹویٹ میں کہاکہ # Solar Polar Vortex  کے مزید مشاہدات سے پتہ چلتا ہے کہ مواد کو تقریباً 60 ڈگری عرض بلد پر قطب کے گرد چکر لگانے میں تقربیاً 8 گھنٹے لگے۔ اس کا مطلب ہے کہ اس واقعہ میں ہوا کی افقی رفتار شامل تھی۔ اندازے کے مطابق بالائی حد 96 کیلو میٹر فی سکینڈ، یا 60 میل فی سکینڈ ہے۔

امریکی نیشنل سنٹر فار ایٹموسفیرک ریسرچ کے شمسی طبیعیات دان سکاٹ میکنٹوش نے جو کئی دہائیوں سے سورج کا مشاہدہ کررہے ہیں، Space.com کوبتایاکہ اُنہوں نے ایسا ’’ بھنور’’ کبھی نہیں دیکھا تھا، جو اس وقت ہوا ہے جب شمسی ماحول میں نمایاں ہونے کا ایک ٹکڑا گھومتا ہے ٹوٹ گیا تھا۔

خلائی سائنسداں اب اس عجیب وغریب واقعہ کا تجزیہ کررہے ہیں تاکہ اس کے بارے میں مزید معلومات اکھٹی کی جاسکیں اور ایک واضح تصویر پیش کی جاسکے۔ اگرچہ ہمارے پسندیدہ ستارے کی 24 گھنٹے نگرانی کی جاتی ہے لیکن یہ اس ماہ کئی طاقتور شعلوں کے ساتھ حیریت زدہ رہتا ہے جس سے زمین پر مواصلات میں خلل پڑتا ہے۔