شمالی بھارت

دارالعلوم دیوبند میں لوک سبھا الیکشن تک سیاسی قائدین کا خیرمقدم نہیں

ابوالقاسم نعمانی کے بموجب دارالعلوم دیوبند الیکشن کے دوران کسی بھی سیاسی جماعت کی تائید نہیں کرے گا کیونکہ ہر شہری کو ووٹ دینے کا حق ہے اور ہر شہری کو ملک کے مفاد میں اپنے حساب سے ووٹ دیناچاہئے۔

سہارنپور (یوپی): دارالعلوم دیوبند نے چہارشنبہ کے دن اعلان کیا کہ اس کے علماء لوک سبھا الیکشن تک نہ تو سیاسی جماعتوں کے قائدین سے ملاقات کریں گے اور نہ ہی ان کے ساتھ تصاویر کھنچوائیں گے۔

متعلقہ خبریں
چہل کی بیوی بھی سلکٹرس سے ناراض
4مرحلوں میں انڈیا بلاک کے صفائے کا دعویٰ
سیاسی جماعتیں ہمیں نظر انداز کر رہی ہیں، علی گڑھ کے اقلیتی رائے دہندوں کا احساس
آر ایس ایس پر امتناع عائد کردیا جائے گا:ادھوٹھاکرے
بی جے پی، ٹیکس دہشت گردی پر اتر آئی ہے: جئے رام رمیش (ویڈیو)

دارالعلوم کے ترجمان اشرف عثمانی نے کہا کہ یہ قدم مہتمم ابوالقاسم نعمانی کی ہدایت پر اٹھایا جارہا ہے۔ انہوں نے پی ٹی آئی سے کہا کہ ملک میں کروڑہا لوگ دارالعلوم دیوبند کے فیصلوں کو مانتے ہیں۔

الیکشن کے وقت کئی سیاسی رہنما دارالعلوم آتے ہیں اور علماء کے ساتھ تصاویر کھنچواکر سوشل میڈیا پر شیئر کرتے ہیں تاکہ رائے دہندوں کو راغب کرسکیں۔

 ابوالقاسم نعمانی کے بموجب دارالعلوم دیوبند الیکشن کے دوران کسی بھی سیاسی جماعت کی تائید نہیں کرے گا کیونکہ ہر شہری کو ووٹ دینے کا حق ہے اور ہر شہری کو ملک کے مفاد میں اپنے حساب سے ووٹ دیناچاہئے۔

دارالعلوم ایسا کوئی قدم اٹھانا نہیں چاہتا جو کسی مخصوص مذہب کے رائے دہندوں پر اثرانداز ہوتا ہو۔

 ترجمان نے کہا کہ عام دنوں میں جب قائدین دارالعلوم آتے ہیں تو ان کا خیرمقدم کیا جاتا ہے لیکن الیکشن کے مدنظر علمائے دارالعلوم دیوبند کسی بھی سیاسی جماعت کے قائد یا نمائندہ کا نہ تو خیرمقدم کریں گے اور نہ ہی ملاقات کریں گے۔