حیدرآباد
ٹرینڈنگ

شہریت ترمیمی قانون کے خلاف اسد الدین اویسی بھی سپریم کورٹ پہنچ گئے

اویسی نے سپریم کورٹ سے مطالبہ کیا ہے کہ سی اے اے کا این آر سی کے ساتھ ناپاک اتحاد ہے۔ این آر سی کے ذریعہ ہندوستانی مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا منصوبہ ہے۔ سی اے اے کے بعد اب این آر سی بھی لایاجائے گا۔

نئی دہلی: اے آئی ایم آئی ایم کے صدر و رکن پارلیمنٹ حیدرآباد بیرسٹر اسد الدین اویسی بھی شہریت ترمیمی قانون (سی اے اے) کے معاملہ پر سپریم کورٹ پہنچے گئے۔ اویسی نے سپریم کورٹ  میں این آر سی کا مسئلہ بھی اٹھایا ہے۔ اویسی نے عدالت میں دائر درخواست میں اپیل کی ہے کہ شہریت ترمیمی قانون کے نفاذ کو فوری طور پر روک دیاجائے۔

متعلقہ خبریں
صدر مجلس کو پرانے شہر کے مسائل حل کرنے بنڈی سنجے کا مشورہ
اسدالدین اویسی کا کووڈ وبا کے تباہ کن اثرات کی طرف اشارہ
تلنگانہ ہائی کورٹ نے دانم ناگیندر کو نوٹس جاری کی
کویتا، پیش نہیں ہورہی ہیں سپریم کورٹ میں ای ڈی کا انکشاف
سپریم کورٹ کا تلنگانہ ہائیکورٹ کے فیصلہ کو چالینج کردہ عرضی پر سماعت سے اتفاق

 اویسی نے سپریم کورٹ سے مطالبہ کیا ہے کہ سی اے اے کا این آر سی کے ساتھ ناپاک اتحاد ہے۔ این آر سی کے ذریعہ ہندوستانی مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا منصوبہ ہے۔ سی اے اے کے بعد اب این آر سی بھی لایاجائے گا۔

اویسی نے الزام لگایا کہ سی اے اے کی طرف سے پیدا ہونے والی صورتحال نہ صرف شہریت کی گرانٹ کو کم کرنا ہے، بلکہ شہریت سے انکار کے نتیجہ میں ان کے خلاف انتخابی کارروائی کرکے اقلیتی برادری کو الگ کرنا بھی ہے۔

سی اے اے کے نوٹیفکیشن کے بعد اویسی نے کہا تھا کہ مذہب کی بنیاد پر کوئی قانون نہیں بنایا جا سکتا اور اس پر سپریم کورٹ کے کئی فیصلے ہیں۔ انہوں نے کہا، "…یہ مساوات کے حق کے خلاف ہے۔ آپ ہر مذہب کے لوگوں کو (شہریت) کی اجازت دے رہے ہیں، لیکن  مذہب اسلام کے لوگوں کو نہیں دے رہے ہیں۔”

اویسی نے دعوی کیا کہ سی اے اے کو نیشنل پاپولیشن رجسٹر (این پی آر) اور نیشنل رجسٹر آف سٹیزن (این آر سی) کے ساتھ مل کر دیکھا جانا چاہئے۔ انہوں نے کہا، "یہ حکومت چار سال بعد سی اے اے کے اصول بنا رہی ہے۔ میں یہ ملک کو بتانا چاہتا ہوں۔ موجودہ وزیر داخلہ امیت شاہ نے پارلیمنٹ میں میرا نام لیا تھا اور کہا تھا کہ این پی آر آئے گا، این آر سی۔ بھی آئے گا۔

 یہ بات انہوں نے کئی بار ٹیلی ویژن انٹرویوز میں کہی۔ اویسی نے کہا، "میں کہنا چاہتا ہوں کہ صرف سی اے اے کو نہ دیکھیں۔ آپ کو اسے این پی آر اور این آر سی کے ساتھ دیکھنا ہوگا۔ جب ایسا ہوگا تو یقیناً اصل ہدف مسلمان، دلت، قبائلی اور غریب ہوں گے۔”

واضح رہے کہ مرکز نے پیر کو سی اے اے20219 کو نافذ کردیا اور اس کے قوانین سےواقف کروادیا ۔ یہ قانون 31 دسمبر 2014 سے پہلے پاکستان، بنگلہ دیش اور افغانستان سے ہندوستان آنے والے غیر دستاویزی غیر مسلم پناہ گزینوں کو شہریت دینے کا انتظام کرتا ہے۔