مشرق وسطیٰ

اسرائیل کو فلسطین پر زمینی حملے کرنے پر بہت بڑی قیمت چکانی پڑے گی: حماس

عبیدہ نے خبردار کیا ’’ہمارے پاس بھاری ہتھیار ہیں جو ہمیں تحفظ فراہم کر سکتے ہیں جو دشمن نے پہلے کبھی نہیں دیکھے ہوں گے اور ہماری بریگیڈ دشمن کی افواج کو کچل سکتی ہیں۔

غزہ: فلسطین کی اسلامی مزاحمتی تحریک (حماس) کے مسلح ونگ القسام بریگیڈز نے جمعرات کو عہد کیا کہ اگر اسرائیل نے غزہ پر زمینی حملہ کیا تو اسے بھاری قیمت چکانی پڑے گی۔

متعلقہ خبریں
برطانیہ میں سیکل رانوں کی مہم، غزہ کیلئے فنڈس جمع کئے جارہے ہیں
جنگ بندی مذاکرات میں پیش رفت نہیں ہوپائی: حماس
اسرائیل میں ویسٹ نائل بخار سے مرنے والوں کی تعداد 31 ہو گئی
اسرائیلی فوج کے فضائی حملوں میں مزید 27 فلسطینی شہید
فلسطینی فوٹو جرنلسٹ نے فرانس کا بڑا انعام ’فریڈم پرائز‘ جیت لیا

القسام بریگیڈز کے ترجمان ابو عبیدہ نے کہا کہ ان کا گروپ ایسے متبادل تلاش کرے گا جس سے اسرائیل اگر غزہ پر زمینی حملے کی کارروائی انجام دینے کی ہمت کرتا ہے تو اسے اس کی بڑی قیمت ادا کرنی پڑے گی اور جان و مال کا بہت بڑا نقصان ہوگا۔

القاسم کو حماس کی خوفناک بریگیڈ کے نام سے بھی جانا جاتا ہے جو کہ 1991 میں قائم ہوئی تھی۔ یہ بریگیڈ غزہ میں سرگرم ہے۔

عبیدہ نے خبردار کیا ’’ہمارے پاس بھاری ہتھیار ہیں جو ہمیں تحفظ فراہم کر سکتے ہیں جو دشمن نے پہلے کبھی نہیں دیکھے ہوں گے اور ہماری بریگیڈ دشمن کی افواج کو کچل سکتی ہیں۔

‘‘ عبیدہ نے کہا کہ ان کی بریگیڈ نے اسرائیلی جیلوں میں قید تمام فلسطینی قیدیوں کا تبادلہ کرنے کے لیے کافی اسرائیلی شہریوں کو یرغمال بنا رکھا ہے۔ انہوں نے فلسطینی نوجوانوں اور عرب اور اسلامی ممالک سے بھی مطالبہ کیا ہے کہ وہ اسرائیل کے خلاف جاری جنگ میں شامل ہونے کے لیے تمام محاذوں پر آگے آئیں۔

اسرائیل نے گزشتہ ہفتے سے حماس کے تباہ کن حملے کے جواب میں زمینی حملے کے لیے ریکارڈ 360,000 ریزرو فوجیوں کو طلب کیا ہے۔

a3w
a3w