تلنگانہ

محمد علی شبیر کا نظام آباد میں والہانہ استقبال، نہرو پارک پر جلسہ عام سے خطاب

ریلی نہرو پارک پہنچی جہاں وہ جلسہ عام میں تبدیل ہوگئی۔ اس موقع پر  نہرو پارک پر کثیر تعداد میں مرد و خواتین موجود تھے۔ نہرو پارک پر محمد علی شبیر نے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں نظام آباد میں نیا نہیں ہوں اور نظام آباد کے ساتھ میرا ایک الگ نہ ہونے والا رشتہ ہے۔

نظام آباد: نظام آباد اربن کانگریس پارٹی کے ایم ایل اے امیدوار کے طور پر سابق ریاستی وزیر اور سابق کونسل اپوزیشن لیڈر محمد علی شبیر پہلی بار نظام آباد شہر میں آمد پر نظام آباد ٹاؤن کانگریس اور ضلع کانگریس کے قائدین نے ان کاشاندار استقبال کیا۔

متعلقہ خبریں
اردو اکیڈیمی کے مسدود کمپیوٹر سنٹرس کو بہت جلد بحال کرنے کا تیقن: محمد علی شبیر
وقف املاک کے تحفظ اور فروغ کے اقدامات کا وعدہ: ریونت ریڈی
تلنگانہ انتخابات: ووٹ دینے کے لیے آنے والے دو افراد کی موت
حلقہ اسمبلی نامپلی سے بہوجن مکتی پارٹی امیدوار نذیر احمد انصاری کا پرچہ نامزدگی داخل
مودی کے خلاف توہین عدالت مقدمہ دائر کرنے کا فیصلہ: مشیر حکومت تلنگانہ

اس موقع پر نظام آباد ٹاؤن میں ایک بہت بڑی بائک ریلی کا انعقادعمل میں لایا گیا جس میں ہزاروں کی تعداد میں نوجوانوں نے حصہ لیا اور محمدعلی شبیر کے استقبال کیلئے جگہ جگہ نوجوان انتظار کرتے دکھائی دئیے۔

استقبالیہ ریالی کے موقع پر کئی تاجرین نے محمد علی شبیر سے کثیر تعداد میں ملاقات کرتے ہوئے گل پوشی کی اور مبارک باد دیتے ہوئے خوشی کا اظہار کیا اور بھاری اکثریت سے کامیاب بنانے کا عزم کیا۔

ریلی نہرو پارک پہنچی جہاں وہ جلسہ عام میں تبدیل ہوگئی۔ اس موقع پر  نہرو پارک پر کثیر تعداد میں مرد و خواتین موجود تھے۔ نہرو پارک پر محمد علی شبیر نے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں نظام آباد میں نیا نہیں ہوں اور نظام آباد کے ساتھ میرا ایک الگ نہ ہونے والا رشتہ ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ متحدہ ضلع نظام آباد ڈی سی سی کے صدررہ چکے ہیں اور دو میعاد کے وزیر بھی۔میں یہاں کے ہر گھر سے جڑا ہوا ہوں اور یہ میراخاندان ہے جیسا کہ کانگریس کے ہر کارکن سے میرا تعلق ڈی سرینواس رامالکشمانا سے ہے۔

ہم سب 10 سالوں میں بہت پیچھے رہ گئے ہیں۔ بی آر ایس لیڈروں کے حملوں کے واقعات سے کانگریس پارٹی کے کارکنوں کو دبایا گیا۔ انہوں نے اپنی جائیدادوں اور زمینوں کے ساتھ بہت محنت کی ہے۔ آئیے سب اتحاد کے ساتھ کانگریس پارٹی کی جیت کے لیے کام کریں اور کانگریس پارٹی کو کامیابی دلائیں اور شہر کے تمام لوگوں کی خدمت کریں۔

اس کے علاوہ، اگر کانگریس پارٹی جیت جاتی ہے، تو ہمیں ترقی کے بارے میں چھ گارنٹی اسکیموں کے بارے میں تمام لوگوں کو آگاہ کرنا چاہئے جو ہم کریں گے۔ انہوں نے کہاکہ نظام آباد کے قائدین اور کارکن آپ کی محبتوں کی بدولت آگے بڑھ رہے ہیں۔

انہوں نے کہاکہ بی آر ایس کالیشورم کی تعمیر کے نام پر ایک لاکھ کروڑ روپے کی بدعنوانی میں ملوث ہے۔سی ایم کے سی آر نے دلت کو سی ایم بنانے کاوعدہ کیا اور دھوکہ دیا۔ بی آر ایس حکومت نے دلتوں کو تین ایکڑ زمین تقسیم کرنے کا وعدہ کیا تھا۔

بی آر ایس نے بے روزگاروں کو گھر بیٹھے نوکریاں دینے کے خواب کو چکناچور کردیا۔انہوں نے کہاکہ کیاکانگریس بی آر ایس جیسے لوگوں کو دھوکہ دینا نہیں جانتی۔ مسٹر محمد علی شبیر نے کہاکہ کانگریس حکومت کے حلف برداری کے دن آنجہانی چیف منسٹر ڈاکٹر وائی ایس راج شیکھر ریڈی نے مفت بجلی کی فائل پر دستخط کرکے مفت برقی کے وعدے کو عملی جامہ پہنایا۔

انہوں نے عوام سے وعدہ کیا کہ کانگریس اقتدار پر آتے ہی پہلے سو دنوں کے اندر کانگریس کی طرف سے اعلان کردہ چھ ضمانتوں پر عمل درآمد کیاجائے گا۔ہمارے پاس بجٹ پلان کو منظم کرنے کا تجربہ ہے، چھ ضمانتوں کو لاگو کرنے کے لیے درکار محصول کی واضح سمجھ ہے۔

کانگریس صدر سونیا گاندھی نے 6 ضمانتوں کا اعلان کیا ہے کہ ریاست کی دولت کو تلنگانہ کے تمام لوگوں میں تقسیم کیا جائے۔کانگریسی حکام کے پاس عوامی حکومت آنے پر ہی غریبوں کو مکانات کی تعمیر کے لیے 5 لاکھ روپئے امداد فراہم ہوسکے گی۔کانگریس پارٹی کو بلاسود قرضوں، کم سود پر قرض، امدادی قیمت، کلہ میں اناج کی خریداری، کسانوں کے قرض معافی کا سہرا جاتا ہے۔

کانگریس پارٹی نے غریبوں کے لئے اندراما ں گھر، بزرگوں اور معذوروں کے لئے پنشن، 100 دن کی طمانیت روزگا اسکیم، غریبوں کو کارپوریٹ ادویات فراہم کرنے کے لئے آروگیہ شری، غریب طلبہ کو اعلیٰ تعلیم حاصل کرنے کے لئے فیس کی واپسی کی اسکیمیں شامل کی ہیں۔

محمد علی شبیر نے کہاکہ ٹی آر ایس حکمران کانگریس کی طرف سے دی گئی تلنگانہ ریاست کی دولت کو عوام میں تقسیم کئے بغیر لوٹ رہے ہیں۔ اسی لیے راہول گاندھی کہہ رہے ہیں کہ لوگوں کو تلنگانہ ریاست میں فائدہ حاصل ہونا چاہئے۔

انہوں نے کہاکہ اپنے ووٹ کی طاقت کا صحیح استعمال کرتے ہوئے ضلع نظام آباد و ریاست کے عوام کا مستقبل بدلنے کا موقع دیں۔میں آپ کی کاسٹ اور ووٹ سے لوگوں کی عزت میں اضافہ کروں گا۔ہم سب متحد رہیں اور آگے بڑھیں اور نظام آباد کو ریاست میں ترقی میں سب سے آگے رکھیں۔

قبل ازیں سید نجیب علی کانگریس نظام آباد اربن امیدوار محمد علی شبیر کی نہروپارک نظام آباد پر تاریخی استقبالیہ ریالی کو مخاطب کررہے تھے کہاکہ کانگریس پارٹی کا تلنگانہ ریاست میں برسر اقتدار لایا جانا عوام کے مفاد کیلئے بے حد ضروری ہے۔

انہوں نے شبیر علی جیسی شخصیت کو انتخابات میں نظام آباد سے کامیابی سے ہمکنار کرنا آندھیوں میں چراغ جلانے کے مماثل ہے۔ سید نجیب علی نے کہاکہ نظام آباد میں کانگریس پارٹی نے ایک طاقتورامیدوار کھڑا کرکے سمندر میں طغیانی پیدا کردی۔ انہوں نے کہاکہ محبوب کانگریس قائد محمد علی شبیر اپنی 34سالہ سیاسی زندگی میں کاماریڈی کو مثالی ترقی دی اور ہر فرقہ و طبقے میں اپنی منفرد شناخت بنائی۔

محمد علی شبیر کو نظام آباد اربن حلقہ اسمبلی اربن سے کانگریس پارٹی امیدوار بنانے سے کاماریڈی کے قائدین میں غم کی لہر چھا گئی۔ سید نجیب علی نے نظام آباد کی  کارکردگی پر شدید تنقید کرتے ہوئے کہاکہ نظام آباد کی ترقی کے نام پر بد عنوانیاں و دھاندلیاں کی گئی کروڑہا روپئے فنڈ کا خرد برد کیا گیا۔

انہوں نے انتباہ دیتے ہوئے کہاکہ آئندہ کانگریس کے انتخابی جلسوں میں دستاویزی ثبوت کے ساتھ ترقی کے نام پر بے قاعدگیاں و لوٹ کھسوٹ کو منظر عام پر لایاجائے گا۔ انہوں نے کہاکہ نظام آباد ترقی کے نام پر ایک نمونہ بن گیا ہے”اندر مٹی اور اوپر چونا بن کر رہ گیا“ایک ایک چیز کو منظر عام پر لائیں گے کس طرح ترقی کے نام پر دھوکہ دیا گیا اور نظام آباد شہر کے سلم علاقوں کی بد حالی کو عیاں کیاجائے گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ نظام آباد شہر کو ترقی دینے کے نام پر جو پروپگنڈا کیاجارہا ہے اس حقیقت کو بھی ہم عوام کے سامنے لائیں گے۔ قائد کانگریس سید نجیب علی نے نظام آباد کی عوام بالخصوص مسلمانوں سے کہاکہ وہ جوش وجذبے کے ساتھ 30/نومبر کو کانگریس امیدوار نظام آباد اربن محمد علی شبیر کو بھاری اکثریت سے ووٹ دیکر کامیاب کریں اور ملی حمیت کا ثبوت دیں۔

اس موقع پر نظام آباد کانگریس امیدوار محمد علی شبیر، پی سی سی نائب صدر طاہر بن حمدان، صدر ضلع کانگریس مانالہ موہن ریڈی، نظام آباد انچارج کرناٹک ایم یل اے بالراج، کانگریس قائد جاوید اکرم و دیگر موجود تھے۔

اس پروگرام میں سٹی صدر کیشاوینو، نظام آباد ضلع ڈی سی سی صدر مانالہ موہن ریڈی اور سابق ایم ایل سی آکولا للیتا موجود تھے۔ سابق ایم ایل سی ارکلہ نرساریڈی،ڈی سی سی سابق صدر گڑگو گنگادھر،پی سی سی نائب صدرطاہر بن حمدان، سینئر قائد ناگیش ریڈی، اقلیتی ضلعی صدور عرفان علی اور وکی یادو، رامرتی گوپی۔ روہیت۔ رام کرشن۔ گھنراج۔ سمن۔ بلاک صدور عبود حمدان، ٹاؤن صدور اعجاز، سیدنجیب علی، یوتھ کانگریس ریاستی نائب صدور گوپی، این ایس یو آئی ریاستی جنرل سکریٹری ویپل گوڑ، این ایس یو آئی ضلع صدر وینو، جاوید اکرم، احمد بھائی، اسد حمدان، مجاہد خان، عزیز انصاری، افتخار، مسعود خان۔ اعجاز، الیاس خان، شفیع، کریم، نعیم، ذاکر، نواز، معین، مقصود احمد ایڈوکیٹ، محمد ضیاء الدین، محمد الیاس، علی، محمد سہیل علی اور دیگر کئی نوجوانوں نے شرکت کی۔ محمد جاوید اکرم نے ریالی میں شرکت کرنے والے تمام افراد کا فرداً فرداً شکریہ ادا کیا۔

a3w
a3w