آندھراپردیش

حیدرآباد کو مشترکہ صدر مقام برقرار رکھنے کے مطالبہ پر شرمیلا برہم

وائی ایس شرمیلا نے کہا اگر حیدرآباد کو مزید دو سال کے لئے مشترکہ دارالحکومت بنانے کی مانگ کر رہے ہیں تو میرا ان سے سوال ہے کہ کیا اب تک یہ لوگ گھوڑوں کے دانت صاف کر رہے تھے؟۔

حیدرآباد: اے پی پی سی سی صدر وائی ایس شرمیلا نے وائی ایس آر کانگریس قائدین کی جانب سے حیدرآباد کو مزید دو سال تک مشترکہ دارالحکومت کے طور پر  برقرار رکھنے کے لئے کئے گئے تبصروں پر شدید برہمی کا اظہار کیا۔

متعلقہ خبریں
نتائج کے اعلان کے بعد 15 دنوں تک مرکزی فورس کی 25 کمپنیاں برقرار رکھنے کی ہدایت
ماہ صیام کا آغاز، مرکزی رویت ہلال کمیٹی کا اعلان
شرمیلا کی امین پیر درگاہ پر حاضری
آج سے 4دنوں تک بارش کا امکان
اے پی کے چیف سکریٹری اور ڈی جی پی دہلی طلب

 آج یہاں صحافیوں سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے کہا اگر حیدرآباد کو مزید دو سال کے لئے مشترکہ دارالحکومت بنانے کی مانگ کر رہے ہیں تو میرا  ان سے سوال ہے کہ کیا اب تک یہ لوگ گھوڑوں کے دانت صاف کر رہے تھے؟ کیا آپ اپنی نااہلی کو چھپانے کے لئے اس مطالبہ کو ہوا دے رہے ہیں؟۔

انہوں نے کہا کہ پانچ سال تک حکومت میں رہنے کے باوجود آپ لوگوں نے عوام سے کئے کئے ایک بھی  وعدہ پر عمل نہیں کیا۔ شرمیلا نے کہا کہ ریاست کے پاس کوئی دارالحکومت نہیں ہے اور نہ کوئی خصوصی حیثیت ہے، کوئی خصوصی پیکیج نہیں ہے۔

پولاورم مکمل نہیں ہوا ہے کم از کم جل یگنم  کے تحت زیر التواء پروجیکٹس کی تکمیل بھی دور دور تک نظر نہیں آ رہی ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ریاست میں کوئی نئی صنعت نہیں لگائی گئی۔

  8 لاکھ کروڑ کا قرض لے کر آندھرا پردیش کو مقروض ریاست بنا دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے مودی کے سامنے گھٹنے ٹیک دئیے۔

a3w
a3w