تلنگانہ

امیت شاہ کے مخالف مسلم بیان سے بی آر ایس کے امکانات روشن

مسلمانوں کو تحفظات کے متعلق مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کے بیان نے تلنگانہ اسمبلی انتخابات میں بی آر ایس کی ہیٹرک کامیابی درج کرنے کے امکانات کومزید روشن کر دیا ہے۔

حیدر آباد: مسلمانوں کو تحفظات کے متعلق مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ کے بیان نے تلنگانہ اسمبلی انتخابات میں بی آر ایس کی ہیٹرک کامیابی درج کرنے کے امکانات کومزید روشن کر دیا ہے۔

متعلقہ خبریں
امیت شاہ نے کشمیر کی صورتحال کاجائزہ لیا
بی آر ایس کی 16نیوز چانلس کے خلاف شکایت
مسلم کوٹہ کو ختم کرنے کا فیصلہ سوچ سمجھ کر کیا گیا:حکومت کرناٹک
تلنگانہ میں 104 امیدواروں کے خلاف فوجداری مقدمات درج
1969 کی تحریک میں طلبہ پر کس نے گولی چلانے کی ہدایت دی؟ کے ٹی آر کا سوال

مرکزی وزیر داخلہ امیت شاہ نے دو دن قبل بی جے پی کے جلسہ عام سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا کہ اگر بی جے پی تلنگانہ میں حکومت بناتی ہے تو مسلمانوں کے تحفظات کو ختم کردیا جائے گا۔ اس بیان سے بی آر ایس کو اسمبلی انتخابات میں اس کی فلاحی اسکیموں سے کہیں زیادہ مدد مل سکتی ہے۔

تلنگانہ کے 119 اسمبلی حلقوں کے تقریباً 53 حلقوں میں مسلم رائے دہندگان بادشاہ گر کا موقف رکھتے ہیں۔ بی آر ایس حکومت نے فلاحی اسکیموں کے علاوہ تعلیم اور روزگار میں مسلمانوں کے لیے تحفظات پر عمل کیا ہے۔ مسلم تحفظات کے بارے میں مرکزی وزیر امیت شاہ کے بیان کا تلنگانہ میں مسلمانوں پر بہت اثر پڑے گا کیونکہ وہ آبادی کا تقریباً 13 فیصد ہیں۔

تلنگانہ میں کسی بھی پارٹی کو حکومت بنانے کے لیے 62 اسمبلی سیٹوں کی ضرورت ہوتی ہے۔ سیاسی مبصرین کا خیال ہے کہ امیت شاہ کے بیان نے 53 حلقوں میں بی جے پی کے امکانات کو خراب کر دیا جہاں مسلمان کنگ میکر ہیں۔ ماضی میں مسلم ووٹر پورے ملک میں کانگریس کی حمایت کرتے تھے۔

لیکن بابری مسجد کے شہادت کے بعد مسلمانوں کا کانگریس پر سے اعتماد اٹھ گیا۔ اس کے علاوہ کانگریس بی جے پی کی ترقی کو روکنے میں ناکام رہی۔ مسلمان اب ایسی پارٹی کو ووٹ دیتے ہیں جو بی جے پی کو اقتدار میں آنے سے روک سکے۔ تلنگانہ کے مسلمانوں کو یقین ہے کہ بی آر ایس کے پاس کانگریس کے مقابلے بی جے پی کو اقتدار میں آنے سے روکنے کا بہتر موقع ہے۔

انتخابات کے دوران دیگر برادریوں کے مقابلے مسلمانوں کا ووٹنگ فیصد بہت زیادہ ہوتا ہے اور ساتھ ہی وہ متفقہ طور پر ایسی پارٹی کی حمایت کرتے ہیں جو بی جے پی کو شکست دے سکے۔ حیدر آباد کے پرانے شہر میں، وہ کل ہند مجلس اتحاد المسلمین کی حمایت کرتے ہیں اور ریاست کے دیگر حصوں میں وہ بی آر ایس کی حمایت کر سکتے ہیں۔

حیدرآباد شہر کے تقریباً سات اسمبلی حلقوں میں مسلمانوں کی آبادی 50 فیصد سے زیادہ ہے۔ تلنگانہ کے تقریباً تمام اضلاع میں مسلمان کافی تعداد میں موجود ہیں اور حیدرآباد، رنگا ریڈی، محبوب نگر، نلگنڈہ، میدک، نظام آباد اور کریم نگر کے سابق اضلاع میں مسلمانوں کی بڑی تعداد آباد ہے۔

a3w
a3w