مضامین

بغاوت سے پوتن کمزور ضرور ہوئے ہیں لیکن ختم نہیں

میری ڈیجیوسکی

اگر روس میں گزشتہ ہفتے پیش آنے والے ڈرامائی واقعات آپ کو بہت پرانے اور بہت پہلے کے دنوں کے لگتے ہیں تو اس کی وجہ یہ ہے کہ بہت سے لوگ چاہتے ہیں کہ آپ ایسا سوچیں یا چاہتے ہیں کہ آپ اسے ایک نئی روشنی میں دیکھیں۔
مجھے حالیہ برسوں میں شاید ہی کوئی ایک واقعہ یاد ہو جس نے اتنی جلدی حقیقت سے افسانے تک کا سفر طے کیا ہو اور اب اس افسانے کا دوسری فرضی داستانوں سے مقابلہ ہے۔
لیکن گرد جمنے کے بعد پہلے یہ واضح ہونا چاہیے کہ اب سیاست اور اقتدار کے حوالے سے اصل صورت حال کیا ہے۔
بغاوت کے بعد ولادی میر پوتن کریملن واپس آ گئے ہیں اور وہ چاہتے ہیں کہ آپ کو معلوم ہو کہ وہ اب بھی انچارج ہیں، ان کا اختیار برقرار ہے اور یہ کہ وہ روس کو چلانے اور یوکرین کے خلاف جنگ جاری رکھنے کے لیے پرعزم ہیں۔وہ کئی مہینوں کے مقابلے میں حالیہ دنوں میں زیادہ دکھائی دے رہے ہیں جن میں کریملن کے کی تھیڈرل اسکوائر میں ایک فوجی تقریب کی صدارت اور داغستان کے جنوبی علاقے میں منعقدہ ’واکاباو¿ٹ‘ کی قیادت کرنا شامل ہے۔ روس نے یوکرین کے شہر کریماتورسک کے ایک مشہور ریستوراں کو میزائلوں سے نشانہ بنایا ہے۔
ویگنر گروپ کے کرائے کے فوجیوں کے سربراہ یوگنی پریگوزن نے بغیر کسی لڑائی کے روس کی جنوبی فوجی کمان کا کنٹرول سنبھالنے کے بعد ماسکو کی طرف پیش قدمی کو روک دیا۔ اب بتایا جاتا ہے کہ وہ بیلاروس میں موجود ہیں۔ روسی سکیورٹی سروس ایف ایس بی نے ان کے خلاف ’مسلح بغاوت‘ کا واحد الزام ان کے طیارے کے منسک میں اترنے کے فوراً بعد ہی ختم کر دیا ہے۔
ان کے جنگجو، جن کی تعداد 10 اور 25 ہزار کے درمیان ہے، کے پاس روس کی باقاعدہ مسلح افواج کے ساتھ معاہدے پر دستخط کرنے، اپنے گھروں کو لوٹنے یا بیلاروس میں اپنے کمانڈر کے ساتھ شامل ہونے کا انتخاب ہے۔
بیلاروس میں پریگوزن کے لیے بظاہر ایک اڈہ تیار کیا جا رہا ہے لیکن یہ واضح نہیں کہ آیا وہ بیلاروس میں ہی رہیں گے یا افریقہ میں ویگنر کی سرگرمیوں پر توجہ مرکوز کرنے کے لیے ڈی کیمپ کر دیے جائیں گے۔
بیلاروسی صدر الیگزینڈر لوکاشینکو اس دوران اونچے اڑ رہے ہیں، کم از کم اپنی نظروں میں۔ وہ اس معاہدے کی ثالثی پر فخر کرتے ہیں جس کے تحت پریگوزن نے اپنے فوجیوں کو پیش قدمی سے روکا تھا، بنیادی طور پر اس سے پوتن کی پوزیشن بچ گئی اور پریگوزن پوتن کے غضب سے۔
یہ معلوم نہیں ہے کہ لوکاشینکو کو اس تگ و دو کا کیا ٹھوس انعام ملا ہو گا لیکن اقتدار پر ان کی گرفت جسے 2020 اور 2021 کے مظاہروں سے خطرہ تھا، اب پہلے سے زیادہ محفوظ نظر آرہی ہے۔
ان تین سرکردہ کھلاڑیوں کے علاوہ دوسری تبدیلیاں بھی ہوئی ہیں۔ یوکرین میں روس سے آنے والی خبروں پر بہت خوشی منائی گئی۔ لیکن اعلیٰ حکام کی جانب سے اس کا اظہار نہیں کیا گیا جہاں صدر زیلنسکی اور دیگر نے زیادہ محتاط رویہ اپنایا، اس سوچ کے ساتھ کہ یوکرین میدان جنگ میں ماسکو کی تکلیف کا فائدہ اٹھا سکتا ہے۔ اگر لڑائی میں تبدیلیاں آنی ہیں تو یہ یوکرین کی طرف سے ایک نیا جارحانہ عمل یا کہہ لیں روسی فوج کی حوصلہ شکنی ہو سکتی۔ لیکن یہ دونوں ہی باتیں ابھی تک نظر نہیں آئیں۔ ایسا لگتا ہے کہ کیف غیر معقول طور پر نہیں لیکن وہ اس بارے میں فکر مند ہے کہ ماسکو میں اقتدار کی اچانک تبدیلی (یا خاتمے) کا کیا مطلب ہو سکتا ہے۔ پریگوزن اس سب کے بعد بھی کوئی امن کی فاختہ نہیں تھے، ان کی شکایت یہ تھی کہ روسی اعلیٰ کمان نااہل ہے جس نے کیف کو بخش دیا ہے۔
کچھ یوروپی ممالک، خاص طور پر بالٹک ریاستیں، ویگنر فوجیوں کی نئی قربت کے بارے میں فکر مند ہیں۔ اگرچہ اب ان کی ایک بڑی تعداد بیلاروس میں موجود ہے حالانکہ کیف کا کہنا ہے کہ وہ انہیں خطرے کے طور پر نہیں دیکھتے۔
روس میں ہونے والی پیش رفت کے بارے میں دیگر یوروپی ممالک اور امریکہ کے سرکاری ردعمل میں بھی احتیاط برتی گئی جس میں پریگوزن کے ساتھ مغرب کے تعلق اور روس میں ممکنہ خرابی کے بارے میں تشویش کے بارے میں تردید کی گئی تھی۔پوتن کے بعد کا دور اچانک بہت قریب نظر آنے لگا اور ضروری نہیں کہ عملی طور پر اتنی بہتری ہو جیسا کہ نظریہ پیش کیا گیا تھا۔ بطور روس کے جوہری ہتھیاروں کے انچارج یا شاید اس سے بھی بدتر اس کا انچارج نہ ہونا بھی پریگوزن یا ان جیسی شخصیت کا اچانک تماشہ غور طلب تھا۔
تو جہاں تک یہ جاننا ممکن ہے شطرنج کے مہرے کیسے نظر آتے، ماسکو پر پریگوزن کی چڑھائی کے ایک ہفتے بعد یا اس کے بعد بھی اس بارے میں بہت سارے کھلے سوالات موجود ہیں جیسے پوتن کی طاقت پر کتنا سنگین داغ لگایا گیا ہے؟ کیا پریگوزن واپس آ سکتا ہے؟ جنگ کے دوران اس کا کیا اثر ہو سکتا ہے؟ اور کیا اب مغرب میں کچھ لوگ یوکرین کی شکست سے زیادہ روس کے خاتمے سے خوفزدہ ہو سکتے ہیں؟
ایسا لگتا ہے کہ بعد میں اثر انداز ہونے کی کوشش میں ماسکو اور اس کے مخالفین دونوں نے ہی کچھ پرجوش چالیں شروع کر دی ہیں جس کے دو بالکل برعکس ورژن اب ابھر رہے ہیں۔ ماسکو کا نیا بیانیہ یہ ہے کہ ٹلر پر اپنے مضبوط ہاتھ اور ایک متحد ٹیم کی بدولت صدر پوتن نے ریاست کو خانہ جنگی کی لعنت سے بچایا اور پھر اب صدر کو زبردست عوامی حمایت حاصل ہے۔ پریگوزن کا منصوبہ روسی وزیر دفاع اور چیف آف جنرل اسٹاف کو پکڑنا تھا اور ان کا منصوبہ پیش قدمی سے پہلے ہی ناکام ہو گیا۔
جب لوگ روستوف کی گلیوں میں ویگنر کے جنگجوو¿ں کو داد دینے کے لیے نکلے، تو ان کو ان کے جانے پر راحت ملی، یہ ان کا شکریہ ادا کرنے کے لیے نہیں تھا۔ ہم جانتے ہیں کہ پریگوزن کی حمایت کس نے کی۔ وہ کم لوگ تھے لیکن ہم ان پر رحم کیے بغیر ان کا پیچھا کریں گے۔ یہ ویگنر کمانڈر تھے جو غدار ہیں۔ دوسری طرف ان کے بہت سے جنگجو یوکرین کے میدان جنگ میں اپنی کامیابیوں کا انعام لینے کے مستحق ہیں۔ اگر وہ حکومت سے وفاداری کا عہد کرتے ہیں تو ان پر ہاتھ نہیں ڈالا جائے گا۔یہ سب بہت سے طریقوں سے متضاد ہے کہ اس وقت چیزیں کیسے ظاہر ہوئیں۔ اس وقت ہم نے جو دیکھا وہ صدر کی طرف سے دو غیر طے شدہ، غیر معمولی طور پر وقت پر اور غیر مرکوز، ملک گیر نشریات تھیں جن میں غداروں کو نہ بخشنے کی دھمکی دی اور خانہ جنگی سے خبردار کیا۔
اس دوران انہوں نے بظاہر سینٹ پیٹرزبرگ کے قریب رہائش گاہ یا اپنے آبائی علاقے میں صدارتی بنکر میں ڈیرے ڈالے رکھے اور ماسکو کے ارد گرد دفاع کو مزید مضبوط بنایا۔
اس سے پہلے کہ غدار کمانڈروں اور بہادر جنگجوو¿ں کے درمیان فرق پیدا ہو جائے، اس حوالے سے ملے جلے پیغامات آئے کہ آیا پریگوزن کو الزامات کا سامنا کرنا پڑے گا یا نہیں۔
اس دوران ایک حقیقی طاقت کی عدم موجودگی کا احساس تھا۔ لیکن پیر تک ایسا نہیں تھا جیسا کہ دیگر حکومتی اراکین سامنے آئے اور پھر انہوں نے صدر کی حمایت میں ریلی نکالنے کے مطالبات کیے۔ ان کے حق میں سڑکوں پر کوئی مظاہرے نہیں ہوئے۔ 24 گھنٹوں کے دوران یوکرین جنگ کی کمان کے لیے روس کا اعصابی مرکز باغیوں کے کنٹرول میں رہا۔
اس تمام غیر یقینی صورت حال کو اب ایک ’جرات مندانہ داستان‘ نے مٹا دیا جس میں بیان کیا گیا کہ صدر نے ریاست کو بچایا تھا۔ اس دوران ایک جوابی بیانیہ مقبولیت حاصل کر رہا ہے اور دوسری طرف ائیر ٹائم جو اتنا ہی گمراہ کن ہو سکتا ہے۔
یہ صرف اس بارے میں نہیں ہے کہ پوتن کمزور ہو گئے ہیں بلکہ یہ کہ ان کے دن گنے جا چکے ہیں اور یہ کہ اگرچہ پریگوزن اس بغاوت میں تنہا کردار دکھائی دیتے ہیں، لیکن انہیں روس کے اعلیٰ حکام کے بااثر ارکان کی سرپرستی حاصل رہی ہو گی جن میں یوکرین کی جنگ کے ایک سابق کمانڈر سرگئے سرووکین بھی شامل ہیں جنہیں شاید اب تک گرفتار کر لیا گیا ہو۔
یہ ورژن دلیل پیش کرتا ہے کہ اگرچہ پریگوزن نے انکار کیا ہے کہ وہ ایک حقیقی بغاوت میں ملوث تھے لیکن ان کا یہ اقدام کریملن کے لیے ایک کھلا چیلنج تھا اور اس کے بعد مزید ایسا ہو سکتا ہے۔
مجموعی طور پر پیغام یہ ہے کہ یوکرین جنگ کے حوالے سے پوتن کا کریملن ناامیدی اور تقسیم کا شکار ہے اور یہ کہ پوتن صرف اقتدار پر فائز ہیں اور یہ کہ وہ کل جا سکتے ہیں کسی ایک ایسے واقعے میں جس کے لیے ہر ایک کو تیاری کرنے کی ضرورت ہے۔
یقیناً یہ اب سب کے لیے سمجھ داری کی بات ہے کہ وہ روسی صدر کی فوری رخصتی سمیت ہنگامی حالات کے لیے تیاری کریں، لیکن اگر کریملن میں پھوٹ پڑ بھی گئی تھی تو ایسا لگتا ہے کہ اس وقت کے لیے ان پر قابو پا لیا گیا ہے اور یہ مشکل نہیں ہے کہ کریملن میں تقسیم کے پہلے سے زیادہ قیاس آرائی پر مبنی بیانات کو مطلوبہ نتائج کی رفتار کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہو یعنی ولادی میر پوتن کا زوال یا روس کا ٹوٹنا۔
یاد رہے کہ ان دونوں واقعات کا تذکرہ اعلیٰ امریکی حکام نے کئی موقع پر اپنے مقاصد کے طور پر کیا ہے۔
یقینا ً گزشتہ اختتام ہفتہ روس کے لیے ایک بڑا جھٹکا تھا لیکن پوتن صدر اب بھی موجود ہیں، ایک کمزور صدر ہونے کے باوجود اور اس وقت ان کا کوئی واضح متبادل نہیں ہے۔
جو کچھ ہوا وہ ایک انتباہ یا وعدہ ہو سکتا ہے کہ آگے کیا ہونے والا ہے لیکن یہ ضروری ہے کہ اس گھماو¿ کی مزاحمت کی جائے اور یاد رکھیں کہ یہ واقعی کیسا تھا۔
خواہش کی سوچ میں دونوں فریقوں کے لیے بری طرح سے پیچھے ہٹنے کا خطرہ موجود ہے۔

a3w
a3w