امریکہ و کینیڈاصحت
ٹرینڈنگ

چیونٹیاں بہترین سرجن بھی ہوتی ہیں، ویڈیو میں دلچسپ انکشاف

ہمارے گھروں، گلی محلّوں اور دیواروں کے کناروں پر پائی جانے والی چیونٹیوں سے متعلق ایک دلچسپ حقیقت سامنے آئی ہے جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ یہ بہترین معالج بھی ہوتی ہیں۔

واشنگٹن: ہمارے گھروں، گلی محلّوں اور دیواروں کے کناروں پر پائی جانے والی چیونٹیوں سے متعلق ایک دلچسپ حقیقت سامنے آئی ہے جس میں انکشاف کیا گیا ہے کہ یہ بہترین معالج بھی ہوتی ہیں۔

جی ہاں ! ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ چیونٹیاں حیرت انگیز طور پر انسانوں کی طرح اپنے زخمی ساتھی کا علاج بخوبی کرسکتی ہیں بلکہ یہ ان میں کامیاب آپریشن کرنے کی بھی صلاحیت ہوتی ہے۔

غیرملکی خبر رساں ادارے کی رپورٹ کے مطابق سائنسی جریدے ’کرنٹ بائیولوجی‘ میں شائع ایک تحقیقی رپورٹ میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ چیونٹیاں اپنے زخمی ساتھیوں کے جسم میں انفیکشن پھیلنے سے روکنے کے لیے ان کے زخمی عضو، جیسے ٹانگ کو کاٹ کر ان کی ان کے جسم سے الگ کرلیتی ہیں، ایسا کرنے سے ان کے ساتھی کی جان بچ جاتی ہے۔

رپورٹ کے مطابق تاریخ میں پہلی بار انسانوں کی طرح سرجری (آپریشن) جیسا عمل کسی اور جاندار میں پایا گیا ہے، چیونٹیوں کی اس قسم کو’فلوریڈا کارپینٹر آنٹ‘ کا نام دیا گیا ہے اور یہ امریکہ میں پائی جاتی ہیں۔

مشاہدے سے یہ بات سامنے آئی کہ زخمی چیونٹیوں کے زخموں کو صاف کرکے انہیں ٹھیک کرنے کی کوشش کی جاتی ہیں، یا ضائع ہونے والی ٹانگ کو کاٹ کر جسم سے علیحدہ کر دیا جاتا ہے۔

جرمنی کی یونیورسٹی آف ورزبرگ کے پروفیسر اور محقق پروفیسر ایرک فرانک کے مطابق انہیں یقین ہے کہ جانداروں میں انسانوں کے بعد ان چیونٹیوں کا یہ طبی نظام سب سے ترقی یافتہ ہے۔

سماجی رابطے کی ویب سائٹ ایکس پر اپنے پیغام میں پروفیسر ایرک فرانک نے لکھا کہ ان چیونٹیوں نے آپریشن کے کئی طریقے وقت کے ساتھ ساتھ سیکھے ہیں، چیونٹیوں نے زخمی ہونے کی صورت میں جب اپنے ساتھی کی ٹانگ ان کی ران کی ہڈی سے اوپر سے کاٹی تو ایسی صورت میں ایسی چیونٹیوں کے بچنے کا اوسط امکان 95 فیصد تک پہنچ گیا۔

محققین کے مطابق یہ پہلا موقع ہے کہ سائنسدانوں نے انسانوں کے علاوہ جانداروں میں زخموں کو ٹھیک کرنے کے لیے میڈیکل طریقہ کار استعمال کرتے ہوئے دیکھا ہے۔

واضح رہے کہ اس سے قبل محققین نے دیمک کا شکار کرنے والی چیونٹیوں پر تحقیق کی تھی جس میں انکشاف کیا گیا تھا کہ یہ چیونٹیاں ساتھیوں کے زخموں کو بیکٹیریا سے بچانے کے لیے جسم کے ایک غدود سے خاص رطوبت جاری کرتی ہیں جو اینٹی بائیوٹک ہوتی ہے جس کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد بہت کم ہوتی ہے۔

a3w
a3w