دہلی

جموں و کشمیر کانگریس چھوڑنے والے 17 لیڈروں کی گھر واپسی

جئے رام رمیش نے کہا کہ ان تمام لیڈروں نے یہ سمجھ لیا ہے کہ کانگریس جموں و کشمیر کے لوگوں کی حقیقی خیر خواہ ہے اور کانگریس سیکولرازم کو فروغ دے کر وہاں دہشت گردی کا خاتمہ کر سکتی ہے، اس لیے یہ تمام رہنما پارٹی میں واپس آئے ہیں۔

نئی دہلی: کانگریس نے کہا ہے کہ بھارت جوڑو یاترا نے ملک میں ایک بڑی تحریک کی شکل اختیار کر لی ہے اور اب 17 اہم لیڈر جنہوں نے یاترا کے جموں و کشمیر میں داخل ہونے سے پہلے کانگریس چھوڑ دی تھی، آج دوبارہ پارٹی میں شامل ہو گئے ہیں۔

متعلقہ خبریں
راہول کی سیکیوریٹی میں چوک 3 پولیس عہدیدار معطل
مودی حکومت افشاء اور فراڈ کے بغیر امتحان منعقد نہیں کرسکتی: کھرگے
مودی حکومت نے آر ٹی آئی قانون کو کمزور کرنے کی مسلسل کوششیں کی ہیں: کانگریس
روہت ویمولہ کیس کی تحقیقات میں کئی تضاد: کے وینو گوپال
نیٹ مسئلہ، پرینکا گاندھی پر بی جے پی کی تنقید

کانگریس کے جنرل سکریٹری کے سی وینوگوپال، جموں و کشمیر کانگریس کے انچارج رجنی پٹیل اور کمیونیکیشن ڈپارٹمنٹ کے انچارج جے رام رمیش نے جمعہ کو یہاں پارٹی ہیڈکوارٹر میں ان لیڈروں کی وطن واپسی کے موقع پر منعقدہ ایک پریس کانفرنس میں کہاکہ کانگریس میں واپس آنے والے یہ تمام رہنما جموں و کشمیر کانگریس کے سینئر رہنما رہے ہیں لیکن کچھ عرصہ قبل غلط فہمی کی وجہ سے پارٹی چھوڑ چکے تھے۔

انہوں نے کہا کہ ان تمام لیڈروں نے یہ سمجھ لیا ہے کہ کانگریس جموں و کشمیر کے لوگوں کی حقیقی خیر خواہ ہے اور کانگریس سیکولرازم کو فروغ دے کر وہاں دہشت گردی کا خاتمہ کر سکتی ہے، اس لیے یہ تمام رہنما پارٹی میں واپس آئے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مزید دو رہنما پارٹی میں واپس آرہے ہیں لیکن بعض وجوہات کی بنا پر وہ یہاں نہیں آسکے۔ اس طرح کانگریس کے کل 19 لیڈر آج پارٹی میں واپس آئے ہیں۔

کانگریس لیڈروں نے کہا کہ نیشنل کانفرنس لیڈر فاروق عبداللہ، عمر عبداللہ اور سابق چیف منسٹر محبوبہ مفتی سمیت کئی اہم رہنما بھارت جوڑو یاترا میں حصہ لے رہے ہیں۔

 انہوں نے کہا کہ جموں و کشمیر میں یاترا کو لے کر لوگوں میں جوش و خروش ہے اور جب کانگریس لیڈر راہل گاندھی 30 جنوری کو کنیا کماری سے لال چوک پر ترنگا لہرائیں گے تو یہ ایک تاریخی موقع ہوگا۔

پارٹی میں واپس آنے والے کانگریسی لیڈروں نے پارٹی چھوڑنے کو اپنی زندگی کی سب سے بڑی غلطی قرار دیا اور کہا کہ انہوں نے یہ قدم دوستی اور جذبات سے ہٹ کر اٹھایا تھا لیکن اب وہ سمجھ گئے ہیں کہ یہ ان کی غلطی تھی۔ جس کانگریس کے ساتھ انہوں نے اپنی زندگی گزاری ہے، وہی پارٹی جموں و کشمیر کے لوگوں کی واقعی خیر خواہ ہے۔

تاراچند جو جموں و کشمیر کانگریس کے سرکردہ رہنما تھے، نے اس موقع پر کہا کہ پارٹی چھوڑنا ان کا غلط فیصلہ تھا۔ کانگریس کی وجہ سے ہی وہ لیجسلیچر پارٹی کے لیڈر اور 6 سال قانون ساز اسمبلی کے اسپیکر رہے ہیں۔ انہوں نے کانگریس چھوڑنے ْکو جذبات میں اٹھایا گیا قدم اور زندگی کا سب سے غلط قدم قرار دیا۔

a3w
a3w