دہلی

فوجداری انصاف کے نظام میں تبدیلی کے 3 بل لوک سبھا میں منظور

امیت شاہ نے کہا کہ وزیر اعظم مودی نے لال قلعہ کی فصیل سے نوآبادیاتی قوانین سے آزادی کی بات کہی تھی، اس کے تحت وزارت داخلہ نے فوجداری قوانین میں تبدیلیوں پر گہرا غور کیا۔

نئی دہلی: لوک سبھا نے آج ہندوستان میں تین اہم بلوں کو صوتی ووٹ سے منظور کیا تاکہ برطانوی دور کے سزا پر مبنی مجرمانہ انصاف کے نظام کو ہٹایا جا سکے اور اس کی جگہ ہندوستانی اقدار پر مبنی انصاف پر مبنی عدالتی نظام قائم کیا جا سکے۔

متعلقہ خبریں
مغربی مہاراشٹرا، مراٹھواڑہ اور کونکن کی 11 سیٹوں پر انتخابی مہم آج شام ختم
مودی حکومت، دستور کے لئے خطرہ: راہول گاندھی
پرینکا گاندھی کا روڈ شو، مسلم علاقوں میں مکانوں کی چھتوں سے پھول برسائے گئے
سخت سیکوریٹی کے درمیان بیالٹ یونٹس تانڈور منتقل
کڑپہ سے شرمیلا کی امیدواری، خاندانی جھگڑے سیاسی جنگ میں تبدیل

لوک سبھا میں وزیر داخلہ امیت شاہ نے انڈین جسٹس (سیکنڈ) کوڈ بل-2023، انڈین سول ڈیفنس (سیکنڈ) کوڈ بل-2023 اور انڈین جسٹس (سیکنڈ) کوڈ بل-2023 پر دو دن تک تقریباً چھ گھنٹے تک جاری رہنے والی بحث کا جواب دیتے ہوئے کہاکہ وزیر اعظم نریندر مودی کی حکومت برطانوی دور کے قوانین کو بدل کر فوجداری انصاف کے نظام میں بنیادی تبدیلیاں لا رہی ہے۔

 انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم مودی نے لال قلعہ کی فصیل سے نوآبادیاتی قوانین سے آزادی کی بات کہی تھی، اس کے تحت وزارت داخلہ نے فوجداری قوانین میں تبدیلیوں پر گہرا غور کیا۔انہوں نے کہا کہ تینوں بل فرد کی آزادی، انسانی حقوق اور سب کے ساتھ یکساں سلوک کے تین اصولوں کی بنیاد پر بنائے جا رہے ہیں۔

 آزادی کے بعد پہلی بار فوجداری انصاف کے نظام سے متعلق تینوں قوانین کو ہیومنائز کیا جائے گا۔ انڈین جوڈیشل کوڈ میں دہشت گردی، منظم جرائم اور بدعنوانی جیسے موضوعات کو شامل کیا گیا ہے اور اسے سزا پر مرکوز نہیں بلکہ انصاف پر مبنی بنایا گیا ہے۔

 انہوں نے کہا کہ قانونی طریقہ کار کو آسان بنایا گیا ہے۔ منظم جرائم اور اشتہاری مجرموں کے حوالے سے سخت دفعات کی گئی ہیں۔ غداری کے جرم کو ختم کرتے ہوئے غداری اور موب لنچنگ کو سنگین ترین جرائم کے زمرے میں رکھا گیا ہے۔

تقریباً ڈیڑھ گھنٹے تک جاری رہنے والے وزیر داخلہ کے جواب کے بعد ایوان نے تینوں بلوں کو حکومتی ترامیم کے ساتھ ایک ایک کر کے منظور کردیا۔ یہ بل 150 سال سے زیادہ پرانے انڈین پینل کوڈ (آئی پی سی)، کوڈ آف کریمنل پروسیجر (سی آر پی سی) اور انڈین ایویڈینس ایکٹ 1872 کی جگہ لیں گے۔ اس طرح ملک نے فوجداری نظام انصاف میں تبدیلی کی طرف ایک قدم اٹھایا۔

تینوں بل جمعرات کو راجیہ سبھا میں بحث کے لیے پیش کیے جائیں گے۔ بیرون ملک موجود مجرموں کے خلاف کارروائی کے لیے بلوں میں کچھ ترامیم کی گئی ہیں۔ اس کے بعد گرامر اور زبان سے متعلق غلطیاں دور کر دی گئی ہیں۔

a3w
a3w