حیدرآباد

بی آر ایس ایم ایل اے وی وینکٹشورراؤ کا انتخاب غلط، ہائیکورٹ کا سنسنی خیز فیصلہ

عدالت کے فیصلہ کے نتیجہ میں جلگم وینکٹ راو کو رکن اسمبلی قراردیاگیا۔عدالت نے وینکٹیشور راو کے انتخاب کو غلط قراردینے کے ساتھ ساتھ ان کو پانچ لاکھ روپئے کا جرمانہ بھی عائد کیا۔

حیدرآباد: ایک سنسنی خیر فیصلہ میں تلنگانہ ہائی کورٹ نے بی آرایس کے رکن اسمبلی وی وینکٹیشورراو کے انتخاب کو کالعدم قراردیا اور جلگم وینکٹ راوجو دوسرے نمبر پر رہے کو حقیقی رکن اسمبلی قراردیا۔

متعلقہ خبریں
ویڈیو: تلنگانہ میں بی آر ایس ایم ایل اے سمیت کئی پارٹی لیڈران گرفتار
تلنگانہ ہائی کورٹ نے دانم ناگیندر کو نوٹس جاری کی
جمعہ کی نماز اسلام کی اجتماعیت کا عظیم الشان اظہار ہے: مولانا حافظ پیر شبیر احمد
41 برسوں کے بعد کسی وزیراعظم کا دورہ عادل آباد
تلنگانہ میں کانگریس کو 10 نشستیں ملیں گی، چیف منسٹر پرامید

یہ قانونی تنازعہ اُس وقت اٹھا جب جلگم وینکٹ راو کوتہ گوڑم کے رکن اسمبلی کے طورپر ایم وینکٹیشور راو کی کامیابی کے خلاف سال 2018میں ہائی کورٹ سے رجوع ہوئے اور الزام لگایا کہ انتخابی حلف نامہ میں جھوٹی معلومات فراہم کی گئیں۔

اس معاملہ کی جامع جانچ کے بعد عدالت نے رولنگ دی کہ وینکٹیشورراو کا انتخاب غلط تھا۔عدالت کے فیصلہ کے نتیجہ میں جلگم وینکٹ راو کو رکن اسمبلی قراردیاگیا۔عدالت نے وینکٹیشور راو کے انتخاب کو غلط قراردینے کے ساتھ ساتھ ان کو پانچ لاکھ روپئے کا جرمانہ بھی عائد کیا۔

سال 2018سے اب تک ان کے انتخاب کو کالعدم قراردیاگیا۔وینکٹیشور راو پہلے کانگریس کے امیدوار کے طورپر اپنے قریبی حریف بی آرایس امیدوار جلگم وینکٹ راو کے خلاف منتخب ہوئے تھے تاہم بعد ازاں انہوں نے بی آرایس میں شمولیت اختیارکرلی۔

a3w
a3w