کھیل

دھرو جورل کیلئے ٹیم انڈیا تک پہنچے کا سفر آسان نہیں رہا

اترپردیش کے وکٹ کیپر بلے باز دھرو جورل جلد ہی حیدرآباد آئیں گے۔ اس فلائٹ میں ان کیساتھ روہت شرما، ویراٹ کوہلی، جسپریت بمراہ اور کے ایل راہول جیسے تجربہ کار کرکٹر موجود ہوں گے۔

لکھنو: اترپردیش کے وکٹ کیپر بلے باز دھرو جورل جلد ہی حیدرآباد آئیں گے۔ اس فلائٹ میں ان کیساتھ روہت شرما، ویراٹ کوہلی، جسپریت بمراہ اور کے ایل راہول جیسے تجربہ کار کرکٹر موجود ہوں گے۔

متعلقہ خبریں
دوہری مہارت کے کھلاڑی
سلیکٹرس ٹیم میں بڑی تبدیلیوں کے موڈ میں نہیں، ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ۔کوہلی اور پنت کو جگہ ملنا تقریباً یقینی
اشون عظیم کھلاڑیوں کے کلب میں شامل ہوں گے
کوہلی، انگلینڈ کے خلاف پہلے 2 ٹسٹ میاچس سے دستبردار
کوہلی نے اہم ریکارڈ اپنے نام کرلیا

دھرو اب جو فلائٹ لینے والے ہیں وہ کوئی عام فلائٹ نہیں ہے۔ وہ پرواز اسے اس کے ان خوابوں کے قریب لے جائے گی جن کے بارے میں وہ بچپن سے سوچ رہے تھے۔ دراصل دھرو کو انگلینڈ کے خلاف پانچ ٹسٹ میچوں کی سیریز کے پہلے دو میچوں کیلئے ہندوستانی ٹیم میں شامل کیاگیا ہے۔

چند ماہ پہلے تک انہوں نے سوچا بھی نہیں ہوگا کہ وہ اس طرح ٹیم انڈیا میں داخل ہوں گے۔ اس 22 سالہ کھلاڑی کیلئے یہ ایک خواب پورا ہوناہے۔ اس 22 سالہ کھلاڑی نے کم عمری میں کئی بڑے کارنامے انجام دیے ہیں۔ اس کا تعلق آگرہ سے ہے اور اس کے والد فوج میں تھے، کارگل جنگ میں حصہ لے رہے تھے۔

جورل 2001 میں پیدا ہوئے تھے اور ان کی عمر 10 سال بھی نہیں تھی جب اس کے والد بطور حوالدار فوج سے ریٹائر ہوئے۔ اس وقت دھرو جورل آرمی اسکول آگرہ میں پڑھ رہے تھے۔ ان کے والد چاہتے تھے کہ ان کا بیٹا فوج میں افسر بنے اور ان کی طرح ملک کی خدمت کرے۔ اسی وجہ سے دھرو کے والد نیم سنگھ جورل نے اپنے بیٹے سے کھیلوں سے متعلق سرگرمیوں میں حصہ لینے کو کہا۔

جب دو ماہ تک اسکول میں کھیلوں کا کیمپ شروع ہوا تو دھرو اپنے دو دوستوں کے ساتھ تیراکی میں حصہ لینے آیا۔ دراصل بچپن میں دھرو نے اپنے والد سے جھوٹ بولا تھاکہ وہ صرف اسکول میں تیراکی سیکھ رہے ہیں جب ان کے والد کو معلوم ہوا کہ دھرو نے کرکٹ کوچنگ کیلئے داخلہ لیا ہے تو انہیں اپنے والد کے شدید غصے کا سامنا کرنا پڑا۔

جب تیراکی کی کلاسیں چل رہی تھیں، دھرو کو کرکٹ کھیلتے اور شاندار شاٹس مارتے ہوئے دیکھا گیا۔ دھرو کو کرکٹ بہت پسند تھی اور اس نے تیراکی چھوڑکر کرکٹ میں اپنا نام درج کرلیا۔ ان کے والد کو بھی جلد ہی احساس ہوگیا کہ ان کا بیٹا کرکٹ کا بہت شوقین ہے اور پھر انہوں نے دھرو کو اپنا خواب پورا کرنے کی اجازت دی۔

جب دھرو کو بیاٹ کی ضرورت تھی تو اس کے والد نے بیاٹ حاصل کرنے کیلئے اپنے دوستوں سے 800 روپے کا قرض لیا۔ ایک سادہ پس منظر سے آتے ہوئے، جہاں مالیات ایک بڑا مسئلہ تھا، دھرو اپنے والد کو دوسروں کو سلام کرتے ہوئے دیکھ کر نفرت کرتے تھے۔ دھرو نے اپنی کرکٹ پر سخت محنت کی تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جاسکے کہ ان کے والد کو ایک دن کسی کو سلام نہ کرنا پڑے۔ دھرو یہ کرنے میں کامیاب ہوگئے ہے۔

جب دھرو تھوڑا بڑا ہوا تو اس کے والد چاہتے تھے کہ وہ سرکاری ملازمت حاصل کرنے پر توجہ دیں اور دھرو کو کرکٹ کھیلنا بند کرنے کو کہا، لیکن ان کے بیٹے نے اپنا ارادہ کرلیا تھا۔ اس کے والد گھر کے مالی مسائل کی وجہ سے بے بس تھے۔

دھرو نے ایک انٹرویو میں بتایا تھاکہ میں نے اپنے والد کو بتایاکہ کٹ کی قیمت لگ بھگ 8 ہزار روپے ہوگی اور وہ قیمت سن کر حیران رہ گئے اور مجھے کرکٹ کھیلنا چھوڑنے کو کہا۔ فوج سے ریٹائر ہونے والے ان کے والد کیلئے بغیر کچھ سوچے کرکٹ کٹ خریدنا عام بات نہیں تھی۔

وہ یہ بھی چاہتے تھے کہ ان کا بیٹا فوج میں افسر بنے۔ اس وجہ سے وہ کٹ نہیں خرید رہے تھے۔ ایسے میں دھرو نے کہا کہ اگر انہیں کرکٹ کٹ نہیں ملی تو وہ گھر چھوڑ دیں گے۔ ایسے میں اس کی ماں نے سونے کی چین بیچ کر اپنے بیٹے کیلئے کٹ حاصل کی۔ کرکٹ میں دھرو کی دلچسپی اور ٹیلنٹ کو دیکھ کر ان کے والد نے بھی ان کا ساتھ دینا شروع کردیا۔

دھرو نے اتر پردیش کیلئے انڈر 14 اور انڈر 16 عمر گروپ کرکٹ کھیلی ہے۔ اس کے بعد انہیں 2020 میں ورلڈکپ کیلئے ہندوستان کی انڈر 19 ٹیم کیلئے منتخب کیاگیا۔ یہاں سے دھرو نے کبھی پیچھے مڑکر نہیں دیکھا۔ انہیں 2020 میں ملک کی انڈر 19 ٹیم کا نائب کپتان بھی بنایا گیا تھا۔ ان کی ٹیم انڈر 19 ورلڈکپ کے فائنل میں بنگلہ دیش سے ہارگئی تھی لیکن دھرو نے ان کی کپتانی میں انڈر 19 ایشیا کپ جیتا تھا۔

اپنے کیریر کے آغاز میں دھرو آف اسپن گیند بازی کرتے تھے لیکن ان کی گیند بازی کچھ خاص نہیں تھی۔ ایسے میں انہوں نے وکٹ کیپنگ میں اپنا ہاتھ آزمایا اور اس کردار میں سب کو متاثر کیا۔ اس کے ساتھ ساتھ وہ مڈل آرڈر بلے باز ہونے کے علاوہ وکٹ کیپر بھی بن گئے۔

a3w
a3w