دہلی

بلوں پر رضامندی روکنے کے بعد گورنر انہیں صدر کے پاس نہیں بھیج سکتے: سپریم کورٹ

چیف جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ، جسٹس جے بی پاردی والا اور جسٹس منوج مشرا کی بنچ نے تمل ناڈو حکومت کی عرضی پر یہ باتیں کہیں اور واضح کیا کہ گورنر ایک بار منظوری کو روک دیتے ہیں تو وہ اسے ہمیشہ کے لیے روک کر بل کو ختم نہیں کر سکتے۔

نئی دہلی: سپریم کورٹ نے جمعہ کو کہا کہ ایک بار جب گورنر اسمبلی کے ذریعہ بھیجے گئے بل کو اپنی منظوری نہیں دیتے ہیں تو وہ بعد میں یہ نہیں کہہ سکتے کہ وہ اسے صدر کے پاس بھیجیں گے۔

متعلقہ خبریں
حلقہ کاروان میں نلوں سے آلودہ پانی کی شکایت: کوثر محی الدین
پرگتی بھون اور راج بھون میں اختلافات برقرار
تین طلاق قانون کے جواز کو چالینج، سپریم کورٹ میں تازہ درخواست
کویتا، پیش نہیں ہورہی ہیں سپریم کورٹ میں ای ڈی کا انکشاف
سپریم کورٹ میں حکومت اے پی کے خلاف عرضی خارج

چیف جسٹس ڈی وائی چندرچوڑ، جسٹس جے بی پاردی والا اور جسٹس منوج مشرا کی بنچ نے تمل ناڈو حکومت کی عرضی پر یہ باتیں کہیں اور واضح کیا کہ گورنر ایک بار منظوری کو روک دیتے ہیں تو وہ اسے ہمیشہ کے لیے روک کر بل کو ختم نہیں کر سکتے۔

بنچ نے اٹارنی جنرل آر وینکٹ رمنی سے کہا کہ تمل ناڈو کے وزیراعلی اور وہاں کے گورنر کے درمیان بہت سی چیزیں ہیں جنہیں حل کرنا ہوگا۔ بنچ نے کہاکہ’’اگر گورنر چیف منسٹر سے بات کرتے ہیں اور ان کی منظوری کے لیے پیش کیے گئے بلوں کو نمٹانے سے متعلق تعطل کو حل کرتے ہیں تو ہم اس کی تعریف کریں گے۔‘‘

بنچ نے کہاکہ "ہم چاہتے ہیں کہ گورنر اس تعطل کو حل کریں۔ ہم اس حقیقت سے آگاہ ہیں کہ ہم ایک اعلیٰ آئینی عہدے کے ساتھ معاملہ کر رہے ہیں۔ آئین کے آرٹیکل 200 کے بنیادی حصے کے تحت گورنر کے پاس تین اختیارات ہیں جو وہ کر سکتے ہیں۔ بل کی منظوری، منظوری روک دیں یا اسے صدر کے غور کے لیے محفوظ رکھیں۔”

بنچ نے کہاکہ "ایک بار جب گورنر نے منظوری روک دی تو اسے صدر کے پاس بھیجنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔” بنچ نے یہ بھی کہا کہ صدر ایک منتخب عہدہ رکھتے ہیں۔ اس لیے آئین نے اسے زیادہ وسیع اختیارات دیے ہیں۔

بنچ نے کہاکہ "گورنر، مرکزی حکومت کے نامزد امیدوار کے طور پر آرٹیکل 200 کے بنیادی حصے میں بیان کردہ تین اختیارات میں سے کسی ایک کا استعمال کریں۔”

اٹارنی جنرل نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ اگر گورنر نے منظوری روک دی تو اسمبلی کہے گی کہ ہمیں رضامندی روکنے کی کوئی فکر نہیں، انہوں نے مزید کہا کہ "ہم ایک بار پھر بل پاس کریں گے”۔

بنچ نے اٹارنی جنرل سے پوچھا کہ کیا گورنر کو رضامندی روکنے کا آزاد اختیار ہے؟بنچ نے کہا کہ وہ اس معاملے پر اگلے ہفتے غور کرے گی۔

واضح رہےکہ 20 نومبر کو عدالت عظمیٰ نے سوال کیا تھا کہ تمل ناڈو کے گورنر جنوری 2020 میں منظوری کے لیے پیش کیے گئے بلوں پر فیصلہ لینے کے لیے تین سال تک کیا کر رہے تھے۔‘‘