سوشیل میڈیا
ٹرینڈنگ

ہندوستان کا قانون، ہندو گروپ کا ظلم سہنے والے امام کو ہی پولیس نے گرفتار کرلیا (ویڈیو)

مولانا اصغر علی نے بتایاکہ وہ کھانا ابھی شروع ہی کررہے تھے کہ مشتعل ہجوم اُن کے گھر پہنچ گئے اور اُنہیں اُن کے ساتھ چلنے کیلئے کہا گیا، میں نے جانے سے انکار کیا تو وہ زبردستی مجھے گھسیٹتے ہوئے گاڑی میں بیٹھا کر پولیس اسٹیشن کے قریب لے گئے جہاں اُنہوں نے امام کو شدید زدکوب کیا گیا۔

رائے پور: چھتیس گڑھ کے پولیس اسٹیشن کے پاس مشتعل ہجوم نے مسجد کے امام کو شدید تشدد کا نشانہ بنایا جبکہ پولیس نے مسجد کے امام کو ہی گرفتار کرلیا۔ پولیس اسٹیشن کے قریب ہندوں دہشت گردوں کے ایک ہجوم نے مسجد کے امام صاحب کو مبینہ طورپر مذہبی جذبات کو مجروح کرنے کے الزام میں تشدد کا نشانہ بنایا۔

متعلقہ خبریں
ویڈیو: چنگی چرلہ میں مسجد کے سامنے شرانگیزی۔ دوسرے دن بھی امن درہم برہم کرنے کی کوشش
خود ساختہ فائنانس ڈپارٹمنٹ کا ایڈیشنل سکریٹری گرفتار
سعودی عرب میں لڑکی سے غیر اخلاقی حرکت پر ہندوستانی شہری گرفتار
خودساختہ ڈاکٹر گرفتار۔ 2 سل فونس، میڈیکل اشیاء ضبط
مسجد بیت میں ناپاکی کی حالت میں بیٹھنا
https://twitter.com/khanthefatima/status/1753304203479617932

واضح رہے کہ 24 جنوری کو مسجد کے امام مولانا اصغر علی اپنے گھر سے مقامی گاؤں کے مدرسہ میں تعلیم دینے کیلئے گئے جہاں وہ تقربیاً 2 سال سے پڑھارہے ہیں۔ بچوں کو پڑھانےکے بعد مولانا اصغر علی دوپہر کے کھانے کیلئے گھر واپس آئے۔

مولانا اصغر علی نے بتایاکہ وہ کھانا ابھی شروع ہی کررہے تھے کہ مشتعل ہجوم اُن کے گھر پہنچ گئے اور اُنہیں اُن کے ساتھ چلنے کیلئے کہا گیا، میں نے جانے سے انکار کیا تو وہ زبردستی مجھے گھسیٹتے ہوئے گاڑی میں بیٹھا کر پولیس اسٹیشن کے قریب لے گئے جہاں اُنہوں نے امام کو شدید زدکوب کیا گیا۔

https://twitter.com/Shirinkhan0/status/1751926796050722940

مسجد کے امام مولانا اصغر علی کو اُن کے سابقہ مدرسہ کے طالبعلم کے واٹس ایپ اسٹیٹس کے باعث حراست میں لیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ ہندوستان میں اس قسم کے واقعات اب معمول بن چکے ہیں، مسلمانوں پر زمین تنگ کی جارہی ہے، مساجد کو شہید کیاجارہا ہے، عدالتیں بھی انصاف سے کام نہیں لے رہی ہیں، نہتے مسلمانوں پر تشدد کے واقعات میں بے تحاشہ اضافہ دیکھا جارہا ہے۔