مشرق وسطیٰ

اسرائیل میں عدالتی اصلاحات کیخلاف لاکھوں افراد کا احتجاج

کل مظاہرے کے منتظمین نے اسرائیل بھر میں 150 مختلف مقامات پر احتجاجی مظاہروں کا اعلان کیا۔ کراؤڈ سلوشنز کے اندازوں کے مطابق، ہفتہ کو صرف تل ابیب میں تقریباً 130,000 لوگ جمع ہوئے۔

تل ابیب: اسرائیل میں حکومت کے ساتھ ناکام مذاکرات کے بعد ہفتہ کو تقریباً تین لاکھ لوگوں نے مسلسل 26ویں متنازعہ عدالتی اصلاحات کے خلاف احتجاج کیا۔یہ اطلاع ایک رپورٹ میں دی گئی ہے۔

متعلقہ خبریں
کرناٹک قانون ساز کونسل میں متنازعہ مندر ٹیکس بل کو شکست
ہم فلسطینیوں کے ساتھ امن چاہتے ہیں۔ اسرائیلی عوام کا حکومت کے خلاف مظاہرہ
اسرائیل میں ویسٹ نائل بخار سے مرنے والوں کی تعداد 31 ہو گئی
جنگ بندی مذاکرات میں پیش رفت نہیں ہوپائی: حماس
فلسطینی فوٹو جرنلسٹ نے فرانس کا بڑا انعام ’فریڈم پرائز‘ جیت لیا

انہوں نے بتایا کہ کل مظاہرے کے منتظمین نے اسرائیل بھر میں 150 مختلف مقامات پر احتجاجی مظاہروں کا اعلان کیا۔ کراؤڈ سلوشنز کے اندازوں کے مطابق، ہفتہ کو صرف تل ابیب میں تقریباً 130,000 لوگ جمع ہوئے۔

مظاہروں کے منتظمین کے مطابق، مجموعی طورپر کل اسرائیل بھر میں تقریباً 300,000 لوگوں نے احتجاج کیا۔ تل ابیب میں مظاہرین نے ایک مرکزی شاہراہ کو بلاک کرنے کی کوشش کی تاہم پولیس نے ٹریفک بحال کر دی۔ پولیس کو آیالون ہائی وے کے علاقے میں واٹر کینن کے ساتھ دیکھا گیا۔

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے جمعرات کو دی وال اسٹریٹ جرنل کو بتایا کہ حکومت پارلیمنٹ (کنیسٹ) کو سپریم کورٹ کے فیصلوں کو پلٹنے کے قابل بنانے کے لئے ڈیزائن کئے گئے عدالتی اصلاحات کے سب سے متنازعہ حصے کو ترک کر دے گی۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اور اپوزیشن کئی مہینوں سے اصلاحات کی بنیادی شقوں پر متفق نہیں ہیں، جوشاید حکومت کو یکطرفہ قانون کو آگے بڑھانے کے لئے ترغیب دے گا۔

عدالتی اصلاحات کا مقصد اسرائیل میں عدلیہ کو ہلانا ہے۔ اگر اسے اپنایا جاتا ہے، تو یہ سپریم کورٹ کے ان قوانین کا جائزہ لینے اورانہیں منسوخ کرنے کی طاقت کو کم کرسکتا ہے، جنہیں وہ غیر آئینی مانتا ہے اور ججوں کے انتخاب میں حکومت کو مزید اختیار دے سکتا ہے۔

a3w
a3w