کرناٹک

راہول گاندھی نے بارش میں بھی خطاب کیا

راہول گاندھی نے کہا کہ کنیا کماری سے کشمیر تک کا یہ یاترا کسی وجہ سے نہیں رکے گی اور انہوں نے لوگوں کا شکریہ ادا کیا کہ وہ دور دراز سے آنے اور بارش میں کھڑے ہوکر ان کی باتیں سنیں۔

میسورو (کرناٹک) : کانگریس کے لیڈر راہول گاندھی نے اتوار کی شام کرناٹک کے میسور میں بارش میں بھیگتے ہوئے ایک پرہجوم ریلی سے خطاب کیا۔ اپنی ‘بھارت جوڑو یاترا’ کو بابائے قوم کے نام وقف کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ مہاتما گاندھی نے لوگوں کو ہمیشہ آگے بڑھنے بے خوف اور خود مختار رہنے کا درس دیا۔

راہول گاندھی نے کہا کہ کنیا کماری سے کشمیر تک کا یہ یاترا کسی وجہ سے نہیں رکے گی اور انہوں نے لوگوں کا شکریہ ادا کیا کہ وہ دور دراز سے آنے اور بارش میں کھڑے ہوکر ان کی باتیں سنیں۔

کانگریس کے ترجمان پون کھیرا نے ٹویٹ کیا، "شروعات میں، میں نے راہل گاندھی کو کور کرنے کی کوشش کی، لیکن پھر دیکھا کہ وہ بارش کے رکنے کا انتظار نہیں کرنا چاہتے تھے کیونکہ ہزاروں لوگ انہیں سننے کے لیے بارش میں بھیگ رہے تھے۔ انہوں نے اپنا خطاب شروع کیا اور پوری طرح بھیگ گئے۔ ایک سچا ہندوستانی لیڈر۔”

https://twitter.com/ashoswai/status/1576579107160137728

کانگریس کے سینئر لیڈر جے رام رمیش نے کہا، ”یہ ایک واضح اعلان تھا۔ نفرت، بے روزگاری اور مہنگائی کے خلاف ملک کو متحد کرنے والی بھارت جوڑو یاترا کو کوئی طاقت نہیں روک سکتی ہے۔

اتوار کی شام کو یاترا کا آغاز زبردست ہوا کیونکہ بھیڑ ایک پرجوش اور تہوار کے ماحول میں دیکھی گئی۔ یاترا سری کالی ویرما مندر سے شروع ہوئی اور میسور ضلع میں تیزی پکڑی۔ قبل ازیں گاندھی نے ایک بیان میں دورے کے اہم مقاصد کا خاکہ پیش کیا۔ بعد میں وہ ننجن گڈ میں شری شری کانتیشورا سوامی مندر درشن کرنے کے لیے گئے۔

دورے کے دوران کچھ سرکردہ لوگوں نے گاندھی سے ملاقات کی۔ اگلے 21 دنوں میں یہ یاترا کرناٹک میں 511 کلومیٹر کا فاصلہ طے کرے گی۔ پانچ ماہ اور 3500 کلومیٹر کی یہ یاترا تمل ناڈو کے کنیا کماری سے جموں و کشمیر کے سری نگر تک کی ہے۔ یہ کانگریس پارٹی کا قومی تعلقات عامہ کا پروگرام ہے جس کا مقصد سماجی پولرائزیشن، معاشی عدم مساوات اور سیاسی مرکزیت کو بھی اجاگر کرنا بھی ہے۔

a3w
a3w