جرائم و حادثات

چرسیوں نے 2 آٹوؤں کے شیشے توڑدئیے، شکایت پر غنڈوں سے مفاہمت کرلینے پولیس کا زور

چھتری ناکہ اپوگوڑہ میں 3 گنجیٹیوں نے 2 آٹو رکشاؤں کے شیشہ توڑ دیئے اور ایک ڈرائیور سے ایک ہزار روپے چھین لئے۔ پولیس غنڈہ عناصر کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے مفاہمت کرنے کا مطالبہ کررہی ہے۔

حیدرآباد: چھتری ناکہ اپوگوڑہ میں 3 چرسیوں نے 2 آٹو رکشاؤں کے شیشہ توڑ دیئے اور ایک ڈرائیور سے ایک ہزار روپے چھین لئے۔ پولیس غنڈہ عناصر کے خلاف کارروائی کرنے کے بجائے مفاہمت کرنے کا مطالبہ کررہی ہے۔

ذرائع کے بموجب فہیم شیخ، محمد اسحاق اور ان کا ساتھی چارمینا تا اپو گوڑہ اٹو رکشا چلاتے ہیں۔ کل رات تینوں چھوٹو، اشونی اور ان کا ساتھی گانجہ اور شراب کثرت سے پیتے ہیں۔ کل رات ایک کے بعد ایک آٹو رکشاء روک کر شیشہ توڑ دیا۔ سب سے پہلے فہیم شیخ کو روک کر پوچھا کہ آٹو اپو گوڑہ علاقہ میں کس سے پوچھ کر چلاریں۔

اس موقع پر فہیم کے آٹو میں چار خواتین سوار تھی۔ انہیں آٹو سے اتار دیا گیا۔ چھوٹو نے فہیم سے کہا کہ سگریٹ لا، جب فہیم سگریٹ لانے گیا تو انہوں نے فہیم کے آٹو رکشا کے شیشے توڑ دیئے۔

اس کے بعد محمد اسحاق کے آٹو رکشا کے سامنے کا شیشہ توڑ دیا۔ ان کا ایک اور ساتھی نے ایک آٹو کو روکا اور ایک ہزار روپے چھین لئے اور کہا گیا کہ پولیس کے پاس جا یا پھر جسٹس کو بولنا ہے تو جاکر بول دے۔

تینوں نے چھتری ناکہ پولیس کو اس واقعہ کی اطلاع دی۔ پولیس نے بروقت وہاں پہنچی۔ چھوٹو اور اشون کو حراست میں لے لیا اور پولیس اسٹیشن منتقل کیا۔

جہاں رات کی ڈیوٹی پر تعینات سب انسپکٹر اور ہیڈکانسٹیبل نے شکایت گزاروں سے مفاہمت کرنے پر زور دے رہے تھے۔

پولیس غنڈوں کے خلاف کارروائی کے بجائے متاثرین کو مفاہمت کرنے پر زور دے رہی ہے۔ پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں کو چھتری ناکہ پولیس کے خلاف کارروائی کرنے کی ضرورت ہے۔

a3w
a3w