تلنگانہ

اڈانی مسئلہ پر کانگریس سے وضاحت کامطالبہ، سرمایہ کاری کے دعوؤں پر شک و شبہات

بی آر ایس لیڈر ڈاکٹر داسوجو سراون نے چیف منسٹر اے ریونت ریڈی پر سخت تنقیدکرتے ہوئے ڈاوس میں ورلڈ اکنامک فورم (ڈبلیو ای ایف) میں سرمایہ کاری کے وعدوں کی قانونی حیثیت پر شک ظاہر کیا۔

حیدرآباد: بی آر ایس لیڈر ڈاکٹر داسوجو سراون نے چیف منسٹر اے ریونت ریڈی پر سخت تنقیدکرتے ہوئے ڈاوس میں ورلڈ اکنامک فورم (ڈبلیو ای ایف) میں سرمایہ کاری کے وعدوں کی قانونی حیثیت پر شک ظاہر کیا۔

متعلقہ خبریں
گوتم اڈانی ایشیاء کے دولت مند ترین شخص برقرار
مودی کے خلاف ایف آئی آر درج نہ کرنے پر کارروائی رپورٹ طلب
سرکاری نظریات سے متاثر بی آر ایس ارکان مقننہ کانگریس میں شامل : ریونت ریڈی
چیف منسٹر نے الوال میں ایلی ویٹیڈ کار یڈور پروجیکٹ کا سنگ بنیادرکھا
”بھارت میراپریوار۔ میری زندگی کھلی کتاب“:مودی

انہوں نے کانگریس پارٹی پر اڈانی گروپ کو لیکر دہرے معیار پر بھی سوال اٹھائے۔سراون نے کہا کہ جہاں ایک طرف کانگریس قائد راہول گاندھی گوتم اڈانی اور وزیر اعظم نریندر مودی کے ساتھ ان کے رابطوں کو نشانہ بناتے ہیں تو دوسری طرف کانگریس کے سی ایم ریونت ریڈی تلنگانہ میں اڈانی گروپ کا سرخ قالین پر استقبال کر رہے ہیں۔

انہوں نے مطالبہ کیا کہ کانگریس پارٹی کو اڈانی پر اپنا موقف واضح کرنا چاہیے۔سراون نے کہا کہ ریونت ریڈی کی نئی دہلی میں وزیر اعظم نریندرمودی سے ملاقات کے بعد تلنگانہ میں اڈانی گروپ نے تلنگانہ میں بڑی سرمایہ کاری کا اعلان کیا۔

ہفتہ کے روز تلنگانہ بھون میں پارٹی لیڈر منے کرشنک کیساتھ ایک پریس کانفرنس میں سراون نے کہا کہ ریونت ریڈی جھوٹ کی بنیاد پر اقتدار میں آئے اور اب بھی جھوٹ کا سہارا لے رہے ہیں۔ انہوں نے بی آر ایس کے کارگزار صدر کے تاراک راما راؤ کے خلاف ڈاوس میں چیف منسٹر کے تبصروں کی سخت مذمت کی۔

ریونت ریڈی کے ڈاوس کے دورے اور سرمایہ کاری کے دعووں کے بارے میں بات کرتے ہوئے، انہوں نے ایک واضح تصویر پیش کی۔انہوں نے کہا کہ ریونت ریڈی نے ڈاوس میں تلنگانہ کے لیے 40,000 کروڑروپے کی بنیادی سرمایہ کاری حاصل کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔ ان میں اڈانی سے 12,000 کروڑ روپے شامل ہیں۔

گوڈی انڈیا سے 8,000 کروڑ روپے؛ JSW سے 9,000 کروڑ روپے، اور WebWerks سے 5,200 کروڑ روپے۔”تقریباً 30 فیصد(12,400 کروڑ) کل سرمایہ کاری (40,000 کروڑ) ایک شخص گوتم اڈانی کی ہے۔انہوں نے سوال کیا کہ کیا یہ تلنگانہ میں گڈ اڈانی اور دہلی میں بیڈ اڈانی کے ساتھ ‘دہلی میں کشتی اور گلی میں دوستی’ کا معاملہ ہے؟

"اڈانی ڈیفنس سسٹمس اینڈ ٹیکنالوجیز نے تلنگانہ میں سرمایہ کاری کا وعدہ کیا ہے۔ کانگریس لیڈرراہول گاندھی نے الزام لگایا تھا کہ اڈانی گروپ کو دفاعی شعبے کا تجربہ نہ ہونے کے باوجود بی جے پی حکومت کی سرپرستی سے اسے فائدہ ملا ہے۔ اب اسی گروپ کو تلنگانہ میں اس شعبے میں سرمایہ کاری کرنے کی اجازت کیوں دی جارہی ہے؟

انہوں نے مطالبہ کیا کہ راہول گاندھی کو اس پر اپنا موقف واضح کرنے کی ضرورت ہے۔اسی طرح، انہوں نے کہا کہ گوڈی انڈیا پرائیویٹ لمیٹڈ نے 8,000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا اعلان کیا۔ اس کا مجاز شیئر کیپٹل صرف 1.5 کروڑ روپے ہے، اور ادا شدہ سرمایہ 75 لاکھ روپے سے کم ہے۔ سالانہ منافع/نقصان صرف 27 لاکھ روپے ہے۔

ایسے میں اس کمپنی کے لیے 8000 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کیسے ممکن ہے؟۔ دیگر سرمایہ کاری جیسے Aragen Life Sciences & WebWerks۔ توسیع/سرمایہ کاری کے لیے بی آر ایس حکومت کے ساتھ تبادلہ خیال کیا تھا“۔انہوں نے سوال کیا ایسے میں ریونت ریڈی نے تلنگانہ کیلئے کون سی سرمایہ کاری حاصل کی۔

انہوں نے مزید کہا کہ کسی کمپنی کی بے عزتی کیے بغیر، کانگریس حکومت کی ذمہ داری ہے کہ وہ اس طرح کی سرمایہ کاری کے بارے میں شکوک و شبہات کو دور کرے۔ راہول گاندھی ابھی بھی بھارت جوڑو نیا یاترا میں اڈانی کے بارے میں بات کر رہے ہیں۔اس بارے میں کانگریس کو اس کی وضاحت کرنی چاہئے۔

پہلے، ریونت ریڈی نے دہلی میں پی ایم مودی سے ملاقات کی۔ انہوں نے پی ایم کے ساتھ کچھ ذاتی بات چیت بھی کی لیکن میڈیا کو تفصیلات بتانے سے انکار کردیا۔ بعد میں، اڈانی نے تلنگانہ میں 12,500 کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا وعدہ کیا۔

پھر الیکشن کمیشن آف انڈیا نے ضمنی انتخابات میں ایم ایل سی کی دو نشستوں کے لیے علیحدہ پولنگ کا اعلان کیا جس سے کانگریس کو فائدہ پہنچا۔ ” اڈانی گروپ نے کانگریس کے زیر اقتدار کرناٹک میں 1 لاکھ کروڑ روپے کی سرمایہ کاری کا اعلان کیا تھا اور راجستھان اور چھتیس گڑھ میں بھی اسی طرح کی سرمایہ کاری کی تھی جب کانگریس اقتدار میں تھی۔ کیا ریونت ریڈی اب مودی کے ہاتھ میں کٹھ پتلی بن کر کھیل رہے ہیں؟

راہول گاندھی اور ریونت ریڈی دونوں کو واضح کرنا چاہیے۔ ریونت ریڈی کو یا تو منافقت کا اعتراف کرنا چاہئے یا یہ تسلیم کرنا چاہئے کہ وہ کانگریس پارٹی میں کام کرنے والے مودی کے نمائندے ہیں۔

انہوں نے دعویٰ کیا کہ پچھلی کے سی آر حکومت نے اڈانی کی تجاویز کو مسترد کردیا تھا۔انہوں نے کہاکہ ایک تعلیم یافتہ وزیر ڈی سریدھر بابوکوڈاؤس میں نظرانداز کردیا گیا۔ڈاکٹر سراون نے مزید کہاچیف منسٹر کے عہدہ پر فائز ہونے کے باوجود ریونت ریڈی نے اپنے گھٹیا رویہ تبدیل نہیں کیا ہے۔

a3w
a3w